ملائشیا: ڈرائیو تھرو شادی کی تقریب کا انوکھا انداز

349

کوالالمپور: کورونا وائرس کے باعث جہاں روزمرہ زندگی متاثر ہوئی ہے وہیں یا تو شادی ملتوی کرنا پڑی یا پھر کورونا وائرس سے بچاؤ کے ایس او پیز پر عمل درآمد کرتے ہوئے کم لوگوں کو بلا کر چھوٹی تقریبات سے کام چلانا پڑا رہا ہے جبکہ ملائیشیا کے بااثر سیاستدان اور سابق وزیر کابینہ کے بیٹے نے انوکھے انداز میں تقریب کرکے سب کو حیران کردیا۔

تفصیلات کے مطابق عالمی وبا کورونا وائرس کے باعث جہاں روزمرہ زندگی متاثر ہوئی ہے وہیں شادی کے خواہش مند بیشتر جوڑوں کو یا تو شادی ملتوی کرنا پڑی یا پھر کورونا وائرس سے بچاؤ کے ایس او پیز پر عمل درآمد کرتے ہوئے کم لوگوں یا محدود لوگوں کو بلا کر چھوٹی تقریبات سے کام چلانا پڑا ہے جبکہ ملائشیا کے ایک جوڑے نے کورونا وبا کے دوران بھی دس ہزار لوگوں کو انوکھے انداز میں شادی کی تقریب میں بلانے کا انتظام کر ہی لیا ہے۔

بین الاقوامی میڈیا کے  مطابق ملائشیا کے بااثر سیاست دان کے بیٹے ٹینگوکو محمد حافظ اور ان کی دلہن اویسین الاگیہ نے شادی میں شریک ہونے کے لیے دس ہزار مہمانوں کی ‘ڈرائیو تھرو’ شرکت کا انوکھا اہتمام کیا ہے جبکہ  اس ڈرائیو تھرو شادی کی تقریب کا اہتمام پتراجایا میں کیا گیا تھا۔

اتوار کی صبح نئے شادی شدہ جوڑے نے سرکاری عمارت کے سامنے گاڑی میں بیٹھ کر شرکت کرنے والے مہمانوں کا استقبال کیا اور مہمان اندر داخل ہوتے ہی گاڑی کا شیشہ اتار کر پہلے سے موجود مہمانوں اور جوڑے کو ہاتھ ہلاتے بھی دکھائی دیے ہیں۔

واضح رہے ایک جانب جہاں ملائشیا کو کورونا وائرس کے انفیکشن کی نئی لہر کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے وہیں سماجی فاصلے کے اصولوں نے شادی شدہ جوڑے کو اس قابل کیا کہ وہ وبائی مرض کے دوران بھی ایک زبردست تقریب کا اہتمام کر سکیں۔

دوسری جانب دولہا کے والد سابق کابینہ وزیر ٹینگکو نان نے فیس بک پر بیٹے کی شادی کی تصاویر شئیر کرتے ہوئے کہا کہ مجھے صبح بتایا گیا تھاکہ باہر دس ہزار گاڑیاں موجود ہیں اور میرے اور اہل خانہ کے لیے یہ اعزاز کی بات ہےکہ ہم نے سماجی فاصلے کو مدنظر رکھتے ہوئے گاڑیوں میں بیٹھکر تقریب میں حصہ لیا اور میں تمام مہمانوں کا بھی شکر گزار ہوں جنھوں نے اس پر عمل کیا اور بھرپور تعاون کیا۔

شادی میں آئے شرکا کو گاڑیوں کے ذریعے واپس جاتے ہوئے تین گھنٹے لگے جبکہ تقریب ختم ہونے کے بعد نزدیک موجود ٹینٹ میں کھانا موجود تھا جسے پارسل ڈبوں کی شکل میں پیک کیا گیا تھا اور تقریب سے واپسی پر مہمان وہاں گاڑی روک کر پارسل لیتے ہوئے گھر روانہ ہوتے رہے۔

خیال رہے ابھی تک ملیشیا میں کورونا وائرس کے 95300 سے زیادہ تصدیق شدہ واقعات کی اطلاع ملی ہے جبکہ اب تک اس بیماری سے 438 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔