اہلخانہ کے ساتھ بیرونِ ملک سفر، حفاظتی ہدایات

200

جب آپ اپنے اہلخانہ کے ساتھ کہیں دور دراز سفر کرتے ہیں تو آپ کے گھر کے معین کردہ معمول جیسے کھانے اور سونے کے معمولات میں تبدیلی آنا عام بات ہے جس رہنے کا مطلب یہ ہے کہ اس بات کا زیادہ امکان ہے کہ آپ یا آپ میں سے کوئی بھی بیمار ہوسکتا ہے۔

کسی نئے ماحول میں کھانے، پانی اور آب و ہوا میں ایڈجسٹ کرنے میں وقت لگتا ہے۔ اور بچے خاص طور پر سفر سے متعلقہ مسائل جیسے اسہال اور انفیکشن کا خطرہ بن سکتے ہیں۔ لیکن کچھ ابتدائی منصوبہ بندی آپ کے سفر کو ہر ایک کے لئے صحتمند رکھنے میں مدد فراہم کرسکتی ہے۔ جب آپ کے اہل خانہ سفر کی تیاری کرتے ہیں تو کچھ چیزوں کو دھیان میں رکھیں۔

اگر آپ بیرون ملک جا رہے ہیں تو پہلے سے اچھی طرح سے تیاری کرنا شروع کردیں۔ مثال کے طور پر یہ جاننا ضروری ہے کہ آپ کے بچوں کو (اور یہاں تک کہ آپ کو) کونسی ویکسینیشن درکار ہے کیونکہ:

مختلف ممالک میں مختلف خطرات اور تقاضے ہوتے ہیں اور انہیں مخصوص ویکسین کی ضرورت پڑسکتی ہے۔ مثال کے طور پر ، اگر آپ افریقہ یا جنوبی امریکہ کے بارشوں والے علاقے میں جا رہے ہیں تو آپ کے گھر والوں کو یرقان کی ویکسین کی ضرورت ہوگی۔

کچھ ویکسینوں کو ایک سے زیادہ خوراک کی ضرورت ہوتی ہے اور وہ سلسلہ میں کئی دن یا بعض اوقات ہفتوں میں دی جاتی ہیں۔

زیادہ تر ویکسینیں آپ کے جسم میں اپنے اثرات مرتب کرنے میں وقت لگاتی ہیں۔

زیادہ تر حفاظتی ٹیکہ جات سفر سے کم از کم 1 مہینہ پہلے دئے جائیں ، لہذا اپنے سفر سے 4-6 ہفتے قبل ڈاکٹر سے اپوانٹمنٹ کا وقت ترتیب دیں۔

آپ کے سفر کی منصوبہ بندی پر منحصر ہے کہ آپ کا ڈاکٹر یہ تجویز کرسکتا ہے کہ معمول کی حفاظتی ٹیکوں کے علاوہ ، آپ اور / یا آپ کے بچے کو ان مندرجہ ذیل بیماریوں سے بچاؤ کے قطرے پلائے جائیں:

1) ٹائیفائیڈ

2) یرقان

3) جاپانی بی انسیفلائٹس

4) گردن توڑ بخار

5) ریبیز