جعلی ڈومیسائل کیخلاف درخواست پر مزید دلائل طلب

60

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائیکورٹ نے جعلی ڈومیسائل کے اجرا کے خلاف خواجہ اظہار کی درخواست پر سماعت 17 دسمبر تک ملتوی کرکے آئندہ سماعت پر دیگر وکلا کو دلائل دینے کی ہدایت کی۔ دوران سماعت اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل کا کہنا تھا کہ تحقیقاتی کمیٹی نے ڈومیسائل کے حوالے سے کچھ خامیوں کی نشاندہی کی ہے ،گزشتہ 2 سال کے دوران ڈومیسائل کے اجرا کی تحقیقات ہوچکی ہے۔ عدالت کا کہنا تھا کہ کمیٹی بین الاضلاع مکینوں کے ڈومیسائل سے متعلق تھی ، کمیٹی کو صرف7 دن دیے گئے اس کا مقصد یہی تھا کام نہ ہوسکے۔ اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل نے کمیٹی کی سفارشات پڑھ کر سنائیں ،اسکروٹنی میں پتا چلا ڈپٹی کمشنرز ضابطے سے متعلق لاعلم تھے، کمیٹی نے سفارش کی کہ نادرا اورڈی سی کی تصدیق کے بغیر مستقل پتا تبدیل نہ کرے ۔سندھ حکومت کے وکیل کا کہنا تھا مشکوک ڈومیسائلز کی منسوخی کا عمل جلد شروع ہوگا،ڈویژن کی سطح پر تحقیقاتی کمیٹیاں بنیں گی،کابینہ منظوری دے چکی، ملازمتوں سے متعلق درخواست گزار کا الزام درست نہیں ،صوبے کا ڈومیسائل رکھنے والا کوئی بھی شہری ملازمت حاصل کرسکتا ہے ۔عدالت کا کہنا تھا کہ اب تک جو انکوائری ہو چکی ہے اس میں کیا کارروائی ہوئی ؟جو بے ضابطگیاں سامنے آچکی ہیں ان کے ذمے داران کیخلاف کارروائی کریں ، نادرا کے وکیل کا کہنا تھا کہ اگر سندھ حکومت کمپیوٹرائزیشن کا منصوبہ شروع کرے تو تعاون کرینگے ، عدالت نے استفسار کیا کہ پتا تبدیل کرنیکا کیا طریقہ ہے؟ نادرا کا کہنا تھا کہ مکان کے اصل دستاویزات اور بلز وغیرہ دیکھتے ہیں ،عدالت نے سماعت 17 دسمبر تک ملتوی کرکے دیگر وکلا سے دلائل طلب کرلیے۔