تِیر……………اقبال

34

جگر سے وہی تِیر پھر پار کر
تمنّا کو سِینوں میں بیدار کر

ترے آسمانوں کے تاروں کی خیر
زمینوں کے شب زندہ داروں کی خیر