احتساب عدالت: شہباز اور حمزہ کے ریمانڈ میں توسیع ۔ بیٹا بیٹی ، داماد اشتہاری قرار

69

 

لاہور(نمائندہ جسارت)احتساب عدالت نے منی لانڈرنگ کیس میں مسلم لیگ(ن) کے صدر شہباز شریف کے صاحبزادے سلمان شہباز، بیٹی رابعہ عمران ، داماد ہارون یوسف ،طاہر نقوی اور علی احمد خان کو اشتہاری قرار دیدیا ، عدالت نے نیب کے3 گواہوں کے بیانات قلمبند کرنے کے بعد سماعت 3دسمبر تک ملتوی کر کے وکلاء کو جرح کے لیے پابند کردیا ۔ احتساب عدالت کے جج جواد الحسن نے منی لانڈرنگ کیس کی سماعت کی ۔ شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو عدالت میں پیش کیا گیا ۔ فاضل عدالت نے حاضری مکمل کرانے کے بعد سماعت شروع کی ۔ شہباز شریف کے وکلاء کی جانب سے کارروائی موخر کرنے کی استدعا کرتے ہوئے موقف اپنایا گیا کہ پنجاب بار کونسل نے ہڑتال کی کال دے رکھی ہے ،
جس پر فاضل جج نے کہا کہ کوئی بات نہیں گواہ موجود ہیں ان کے بیانات قلمبند کر لیتے ہیں آپ جرح نہ کریں ۔نیب کے3 گواہان طیب زوار، خالد محمود اور فیصل بلال بیان دینے کے لیے ذاتی حیثیت میں احتساب عدالت میں پیش ہوئے۔فاضل عدالت نے پیش نہ ہونے والے ملزمان کے حوالے سے ریمارکس دیے کہ 30 دن مکمل ہو گئے ہیں لیکن ملزمان عدالت میں پیش نہیں ہوئے، تمام ملزمان کو بذریعہ اشتہار بھی طلب کیا گیا لیکن پیش نہیں ہوئے جس کے بعد سلمان شہباز، رابعہ عمران، ہارون یوسف، طاہر نقوی اور علی احمد خان کو اشتہاری قرار دیدیا گیا ۔ ۔فاضل عدالت نے نیب گواہان کے بیانات پر ملزمان کے وکلا ء کی جرح کے لیے کارروائی3دسمبر تک ملتوی کر دی۔ علاوہ ازیں احتساب عدالت کے جج امجد نذیر چودھری کی عدالت نے غیر قانونی اثاثہ جات کیس ریفرنس کی سماعت کرتے ہوئے کیس میں ملوث سابق ڈی جی ایل ڈی اے احد چیمہ کی اہلیہ، والدہ اور اہل خانہ سمیت دیگر افراد کے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کا حکم دیا ہے۔ نیب پراسیکیوٹر کو ہدایت کی ہے کہ وہ دیگر اداروں کا تعاون حاصل کر کے ملزمان کو گرفتار کرکے 30 نومبر کو عدالت میں پیش کریں۔ دوران سماعت عدالت نے احد چیمہ سے استفسار کیا کہ کیا آپ جانتے ہیں کہ آپ کے اہل خانہ کہاں رہتے ہیں جس پر احد چیمہ نے اپنے اہل خانہ کی رہائش سے متعلق لاعلمی کا اظہار کیا۔ عدالت نے احد چیمہ کی اہلیہ اور والدہ سمیت اہل خانہ کے جن افراد کے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کا حکم دیا ہے۔ ان میں صائمہ احد، فیصل احد، نازیہ اشرف، احمد حسن، سعدیہ، نشاط سمیت دیگر شامل ہیں۔