بلدیاتی انتخابات نہ کرانے پر الیکشن کمیشن اور سندھ حکومت کو توہین عدالت کے نوٹس

70

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ ہائیکورٹ میں بلدیاتی انتخابات اور مردم شماری کے نتائج روکنے کا معاملہ ، الیکشن کمیشن کو بلدیاتی انتخابات کے لیے سندھ حکومت کو نیا خط لکھنے کی ہدایت کردی گئی۔ سندھ ہائی کورٹ میں سندھ میں بلدیاتی انتخابات اور مردم شماری کے نتائج روکنے سے متعلق سماعت ہوئی جہاں بلدیاتی انتخابات نہ کرانے پر الیکشن کمیشن اور سندھ حکومت کو توہین عدالت کے نوٹس جاری کردیے گئے، عدالت نے الیکشن کمیشن کو بلدیاتی انتخابات کے لیے سندھ حکومت کو نیا خط لکھنے کی ہدایت کی، جسٹس محمد علی مظہر نے الیکشن کمیشن سے استفسار کیا کہ آپ کب تک بلدیاتی انتخابات کرائیں گے ؟۔ مردم شماری کے لیے بلدیاتی انتخابات بھی روک دیے ، درخواست گزار کا مؤقف ہے کہ حلقہ بندی کا بہانہ کرکے بلدیاتی الیکشن روکے جارہے ہیں، سندھ حکومت 78ارب روپے کا سالانہ بجٹ کھانا چاہتی ہے، ابھی تک مردم شماری کے نتائج جاری نہیں کیے گئے،محکمہ شماریات کا کہنا تھا کہ حکومت نے کمیٹی بنادی ہے جلد فیصلہ ہوجائے گا ، حکومتی کمیٹی کی سفارشات کی روشنی میں جلد مردم شماری کے نتائج کا فیصلہ ہوجائے گا، درخواست گزار کا کہنا تھا کہ عدالت نے فروری میں حکم دیا تھا اب تک عمل درآمد نہیں ہوا، عدالت نے عدالتی حکم نامہ حکومتی کمیٹی کے سربراہ علی زیدی کو بھیجنے کا حکم دے دیا عدالت نے مزید سماعت 15 دسمبر تک ملتوی کردی۔