گیا……………اقبال

40

پُرانی سیاست گری خوار ہے
زمیں مِیر و سُلطاں سے بیزار ہے

گیا دَورِ سرمایہ داری گیا
تماشا دِکھا کر مداری گیا