کراچی میں جرائم بڑھ گئے ،10 ماہ کے دوران 322 افراد قتل ،رہزنی کی 18 ہزار وارداتیں

113

کراچی ( اسٹاف رپورٹر )کراچی میں جرائم کنٹرول کرنے کے دعوؤں کے برعکس شہر بھر میں جرائم بڑھ گئے‘ پولیس مجرموں کو کنٹرول کرنے میں ناکام ‘ گزشتہ دس ماہ میں 322شہری قتل جبکہ رہزنی کی 18ہزار وارداتیں رپورٹ ہوئیں جبکہ بڑی تعداد میں رہزنی کی وارداتیں تھانوں میں رپورٹ ہی نہیں ہوتیں۔سٹیزن پولیس لائژن کمیٹی( سی پی ایل سی)نے کہاہے کہ10 ماہ کے دوران کراچی میں322 شہریوں کو قتل کر دیا گیا جبکہ 18ہزار موبائل فون چھینے گئے۔ سی پی ایل سی نے رواں سال کے 10 ماہ میں ہونے والے جرائم کے اعدادو شمار جاری کر دیے ہیں،جس میں بتایاگیاہے کہ وارداتوں کے دوران 322 شہری اپنی جانوں سے ہاتھ دھوبیٹھے ، جنوری سے اکتوبر تک بھتا خوری کی17وارداتیں رپورٹ ہوئیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ اغوا برائے تاوان کی2 اور بینک ڈکیتی کی ایک واردات ہوئی جبکہ ، شہریوں سے 10 ماہ میں تقریباً18 ہزار موبائل فون چھینے گئے اور 1300 سے زایدگاڑیاں چوری یاچھینی گئیں جبکہ 30ہزار سے زائد شہری موٹر
سائیکلوں سے محروم ہوئے۔ رپورٹ کے مطابق پولیس نے 281 گاڑیاں،1845 موٹرسائیکلیں برآمد کیں، چھینے گئے 1885موبائل فون بھی برآمد کیے گئے۔حکام کے مطابق سی پی ایل سی کی جانب سے ہر ماہ کے اختتام پر جرائم کے اعداد وشمار جاری کیے جاتے ہیں تاہم شہریوں کی جانب سے موبائل فون یا موٹرسائیکل چھیننے کے بہت سے واقعات درج نہیں کرائے گئے۔