پارلیمنٹ حملہ کیس: عمران خان بری، دیگر ملزمان پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ

215

اسلام آباد: پارلیمنٹ حملہ کیس میں عدالت نے وزیر اعظم عمران خان کو بری کردیا جب کہ کیس کے دیگر ملزمان پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق انسداد دہشت گردی کی عدالت نے پارلیمنٹ حملہ کیس کا محفوظ فیصلہ سنا دیا۔ فیصلہ جج راجہ عباس نے سنایا۔

عدالتی فیصلے کے مطابق پارلیمنٹ حملہ کیس میں عمران خان کی بریت کی درخواست منظور کرتے ہوئے انہیں بری کردیا گیا۔

عدالت نے کیس میں عمران خان کے علاوہ دیگر ملزمان پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کرلیا۔ دیگر ملزمان میں شاہ محمود قریشی، پرویز خٹک، شفقت محمود، اسد عمر، علیم خان، جہانگیر ترین شامل ہیں۔ عدالت نے دیگر ملزمان کو آئندہ سماعت پر طلب کرلیا۔ فرد جرم 12 نومبر کو عائد کی جائے گی۔

2014 میں دھرنے کے دوران عمران خان کے خلاف مقدمات درج کیے گئے تھے۔ وزیراعظم عمران خان نے بریت کے لیے درخواست دائر کی تھی۔ سرکاری وکیل نے بھی درخواست کی حمایت کی تھی۔

انسداد دہشت گردی کی عدالت نے پارلیمنٹ حملہ کیس کا فیصلہ 19 اکتوبر کو محفوظ کرلیا تھا۔ وزیر اعظم عمران خان کے وکیل کو تحریری جواب جمع کرانے کا حکم دیاگیا ہے۔

عدالت نے کہا تھا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف پی ٹی آئی کارکن قتل کا مقدمہ خارج کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ بھی 29 اکتوبر کو ہی سنایا جائے گا۔

انسداد دہشت گردی اسلام آباد کی عدالت کے جج راجا جواد عباس نے پارلیمنٹ اور پی ٹی وی حملہ کیس کی سماعت کی تھی۔

انسداد دہشت گردی کی عدالت نے پی ٹی وی حملہ کیس کی سماعت 12 نومبر تک ملتوی کردی تھی۔

سماعت کے موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمودقریشی کے وکیل نسیم شاہ نے عدالت کو بتایا کہ عدالت ہمیں نوٹس دے گی تو جواب جمع کروا دیں گے۔ جس پر جج راجا جواد عباس نے کہا کہ پونے 4 سال سے نوٹس دے رہے ہیں، جواب جمع نہیں کرایا۔ اب کی بار تو دھمکی دی دے۔

وکیل شاہد نسیم نے کہا کہ عدالت کی طرف سے نوٹس آئے یا دھمکی ہمیں قبول ہے۔