معلم انسانیت ﷺ کا طریقہ تدریس

262

کتاب موجود ہو، طلبہ بھی موجود ہوں اور معّلم موجود نہ ہوتو ممکن نہیں ہے کہ محض کتاب سے طلبہ علم حاصل کر سکیں۔ اس لیے کتاب اور معلّم لازم و ملزوم ہیں۔ بالکل اسی طرح اللہ تعالٰی نے انسانیت کی ہدایت کے لیے کتاب یعنی قرآن کے ساتھ معلّم یعنی اپنے نبیؐ کو دنیا میں بھیجا خودنبی نے فرمایا کہ ’’علم حاصل کرنا ہر مسلمان عورت پر فرض ہے‘‘ اور یہ بھی فرمایا کہ ’’مجھے معلّم بنا کر بھیجا گیا ہے‘‘۔
آپؐ نے سب سے پہلی درسگاہ دارِارقم کو بنایا تاکہ جو لوگ اسلام کو قبول کرنے والے اسلام کے دامن رحمت میں آئیں ان کی تعلیم تربیت ہوسکے یہ قافلہ جب ہجرت کرکے مدینے پہنچا تو آپؐ ان کی تعلیم تربیت سے اس وقت بھی غافل نہ ہوئے بلکہ آپؐ نے وہاں پہنچ کر مسجد نبوی کی تعمیر کے بعد باہر ایک چبوترہ تعلیم و تربیت کے لیے تعمیر فرمایا یہاں وہ طلبہ اپنے علم کی پیاس بجھاتے جو اپنا سارا وقت حصول علم کے لیے دیتے وہ یہیں رہتے تھے۔
معلّم انسانیت خود ان کی تعلیم و تربیت فرماتے ان طالب علموں میں ہر طرح کے لوگ ہوتے کوئی ذیادہ ذہین کوئی اوسط، کوئی غریب اور مفلس کوئی مالدار حتیٰ کہ کئی تو دوسرے ممالک کے طلبہ بھی تھے۔ ان سب کی ذہنی سطح اور حالات کو مدّ نظر رکھ رکر آپؐ ان کو تعلیم کے زیور سے آراستہ فرماتے۔ آپؐ کے طریقہ تعلیم کے چند نمایاں حصّے پیش کیے جارہے ہیں تاکہ ان کو اپنا کر ہم اپنے آنے والی نسلوں کی بہترین تعلیم و تربیت کر سکیں۔
ذاتی تعلق و شفقت
استاد کا شاگرد کے ساتھ جب تک ذاتی تعلق شفقت کی بنیاد پر نہ ہو تو تدریسی عمل برگ وبار نہیں لاسکتا۔ ذاتی تعلق و شفقت ہی وہ چیز ہے جو دل و ذہن کو استاد سے اکتساب علم کے لیے تیار کرتا ہے۔ یہ خوبی نبیؐ کی ذات میں پائی جاتی تھی جو ایک بار آپؐ سے ملاقات کرتا اس کے ساتھ نبیؐ مسکراتے ہوئے ملتے، جب یہ ملاقات ختم ہوئی تو اگلی ملاقات کے لیے شوق پیدا ہوتا۔ ہر فرد کو ایسا محسوس ہوتا کہ آپؐ اس سے دوسرے فرد کے مقابلے میں زیادہ شفقت فرماتے ہیں۔
ذوق و شوق
انسان اسی کام کو توجہ اور لگن کے ساتھ کرتا ہے جس کام کا اس کو ذوق و شوق ہو گویا یہ چیز کام کے کرنے کا محرک بن جاتی ہے اب یہ ذوق و شوق پیدا کرنا ایک ماہر استاد کا کام ہے اس کے بغیر استاد سے اکتساب علم کی مثال ایسی ہی ہوگی جیسے کہ بارش کسی پتھر پر برستی ہے۔ معّلم انسانیتؐ کا کمال یہ تھا کہ آپؐ پہلے صحابہ کرامؓ کے اندر ذوق وشوق پیدا فرماتے ۔ بار بار جنت کے تذکرے اس کے اندر نعمتوں کے حاصل ہونے کی باتیں یہ بالکل ایسی طرح جس طرح ایک ماہر کسان بیج بکھرنے سے پہلے زمین کو تیار کرتا ہے۔
قول و فعل میں یکسانیت
ایک بہترین اور اعلٰی کردار کے انسان میں یہ خوبی ہونی چاہیے کہ وہ جو کہے اس پر عمل بھی کرے یہ اصول درس وتدریس میں مسلّمہ ہے۔ ایک استاد جو کچھ تدریس کے دوران اپنے شاگردوں کو بتا رہا ہے اس پر وہ خود عامل ہو۔ نبیؐ نے جو باتیں اپنے شاگردوں کو بتائی اس پر عمل کرکے سب سے زیادہ دیکھایا اگر آپؐ نے امانت اور دیانت یا ایفائے عہد کے بارے میں تلقین کی تو آپؐ کی حیات مبارکہ میں اس پر عمل کی بہترین مثالیں ملتی ہیں۔
فصاحت اور بلاغت
ایک ایسا استاد جو شاگردوں کی زبان سے ناواقف ہو یا اس پر اس کی گرفت کمزور ہو تو یہ کمزوری اس کے اس کام میں سدّ راہ بنے گی۔ استاد تدریسی عمل کے دوران اچھے الفاظ اور جملے استعمال کرے اور دوران گفتگو اس بات کا جائزہ لے کہ اس کی بات طلبہ کو سمجھ آرہی ہے یا نہیں۔ نبیؐ کا یہ وصف تھا کا آپ فصیح و بلیغ گفتگو فرماتے کم الفاظ ہوتے، چھوٹے چھوٹے جامع جملے ارشاد فرماتے۔ اگر کوئی چاہتا کہ الفاظ گن لے تو یہ کام آسانی سے ہوسکتا۔ بہت زیادہ اہم باتیں ہوتی تو آپؐ اس کو دوہراتے۔ تاکہ سامع اس کو سمجھ کر آسانی سے یاد کرلے۔ آواز نہ بہت پست ہوتی اور نہ آپؐ چیخ کر بات کرتے۔ خطبے مختصر اور جامع ہوتے۔
سوال و جواب کا طریقہ
نبیؐ کا طریقہ تدریس بڑا دلچسپ ہوتا آپؐ حاضرین کی توجہ کو اپنی طرف مبذول رکھنے کے لیے دوطرفہ گفتگو بھی فرماتے۔ حاضرین سے سوال وجواب کا سلسلہ رکھتے۔ بعض اوقات آپؐ بات کو اچھی طرح سمجھانے کے لیے خود ہی سوال کرتے اور پھر اس کا جواب بھی ارشاد فرماتے۔ جیسے کہ ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اکرمؐ نے فرمایا کہ تم جانتے ہو کہ مفلس کون ہے؟ حاضرین مجلس نے عرض کیا: ہمارے نزدیک مفلس وہ ہوتا ہے جس کے پاس نہ نقدی ہو اور نہ کوئی سامان ہی ہو۔
اس پر رسولؐ نے فرمایا کہ میری امّت کا مفلس وہ ہوگا جو دنیا میں نمازی تھا، روزے دار تھا اور زکوٰۃ دیا کرتا تھا۔ ان عبادات کے اجر وثواب کے ساتھ میدان حشر میں آئے گا۔ اس کے ساتھ اس کا یہ حال ہوگا کہ دنیا میں کسی کو گالی دی تھی، کسی پر بدکاری کا الزام لگایا تھا، کسی کا مال نہ حق کھایا تھا، کسی کی خون ریزی کی تھی اور کسی کو نہ حق مارا تھا۔ ان تمام لوگوں میں جن جن پر اس نے ظلم و زیادتی کی تھی اس کی نیکیاں بانٹ دی جائیں گی۔ پھر اگر مظلوموں کے حق ادا ہونے سے پہلے ہی اس کی نیکیاں ختم ہوگئیں تو ان کے گناہ اس کے حساب میں ڈال دیے جائیں گے اور پھر اسے جہنم میں پھینک دیا جائے گا‘‘۔
امثال اور قصوں کے ذریعے
تعلیم و تر بیت کے لیے ضروری ہے کہ استاد امثال اور قصوں کے ذریعے اپنے شاگردوں تک معلومات ذہن نشین کرائے تاکہ وہ اس کے اخلاق کا حصّہ بن سکے۔ ہمیں سیرت کے مطالعے سے بارہا یہ بات ملتی ہے کہ آپؐ سچّے قصے بیان فرماتے اور بات کو سمجھانے کے لیے مختلف قسم کی د لچسپ مثالیں دیتے تاکہ بات اچھی طرح سمجھ آجائے اور زیادہ دیر تک یاد رہے۔ مثال کے طور پر آپؐ نے فرمایا: اچھے ہم نشین اور بْرے ہم نشین کی مثال ایسی ہے، جیسے مْشک بیچنے والا اور بھٹیارہ۔ پس مشک بیچنے والا یا تو تمہیں مشک پیش کرے گا یا تم خود اس سے مْشک خرید لوگے، یا (کم ازکم) اس کے پاس سے خُوشبو آتی رہے گی۔ اور بھٹیارہ یا تو تمہارے کپڑے جلادے گا۔ یا (کم از کم) اس سے بدبو تمہیں پہنچے گی‘‘۔ (متفق علیہ)
آج کے ماہرین تعلیم نے طالب علم کے ذہن سازی اور تعلیم و تربیت کے لیے کچھ طریقے اپنائے ہیں ان میں جو بھی بہترین طریقے ہیں اور جن سے آنے والی نسل تیار ہورہی ہے۔ ان کے اندر خوبیاں تو ان ہی بنیادی طریقوں کی وجہ سے ہے جو کہ آپؐ نے اپنی حیات مبارکہ میں انسانیت کی تعلیم وتربیت کے دوران کرکے دکھائے۔ مگر آج ان طریقوں کو جزوی طور پر اپنایا جاتاہے۔ جس کی وجہ سے ثمرات پوری طرح ظاہر نہیں ہوتے اور آدھا تیتر اور آدھا بٹیر والی کیفیت سے قوم دورچار ہے۔ موجودہ تعلیم نظام کی خرابی کی سب سے بڑی وجہ ہمارا تعلیم نظام خدا مرکز نہیں رہا ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ نظام تعلیم کو خدا مرکز بنایا جائے۔