پی آئی اے مالی خسارہ، جاپان کے لیے فضائی آپریشن معطل

158

کراچی: کورونا وائرس اور پائلٹس کے مشکوک لائسنسز کا معاملہ سامنا آنے کے بعد امریکہ،  چین اور یورپ کی فضائی آپریشن پر پابندی عائد ہونے کے باعث پی آئی اے کو شدید مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

خبر رساں اداروں کے مطابق پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز نے فضائی آپریشن پر پابندی عائد ہونے سے مالی خسارے کے باعث جاپان کے لیے فضائی آپریشن مکمل معطل کر دیا ہے جبکہ ترجمان پی آئی اے عبد اللہ حفیظ کا کہنا تھا کہ پاکستان سے جاپان کے لیے براہ راست مسافروں کی تعداد انتہائی کم ہے اور پی آئی اے براستہ چین-جاپان کے لیے فلائیٹس چلا رہی تھی تاہم کورونا وائرس کے باعث چین کے لیے محدود پراوزیں چلائی جا رہی ہیں جس کے بعد جاپان کا فلائیٹ آپریشن بھی مالی خسارے کا باعث بن رہا تھا۔

ترجمان پی آئی اےکا کہنا تھا کہ چین کے لیے خصوصی اجازت نامے کے بعد پروازیں چلائی جا رہی ہیں جن کی تعداد انتہائی کم ہے اور ایسی صورت میں جاپان کے لیے فضائی اپریشن جاری رکھنا بہت مشکل ہے اور یہ آپریش خسارے کا باعث بن رہا تھا۔

 واضح رہے دنیا بھر کی فضائی کمپنیوں کو کورونا وائرس کے باعث شدید مالی مسائل کا سامنا ہےتاہم پاکستان کی سرکاری فضائی کمپنی پی آئی اے پائلٹس کے مشکوک لائسنسز کا بھی معاملے سامنے آنے کے بعد مزید پابندیوں کا شکار ہے۔

دوسری جانب پی آئی اے پر برطانیہ سمیت یورپ اور امریکہ میں داخلے کی پابندی عائد ہے تاہم پی آئی اے اس وقت متبادل ذرائع سے برطانیہ کے لیے محدود پروازیں چلا رہا ہے جبکہ سعودی عرب کی جانب سے محدود حج کے باعث پی آئی اے کو 12 ارب روپے کے خسارے کا سامنا رہا ہےاور عمرے پر پابندی کے باعث تقریباً 15 ارب روپے سے زائد خسارہ ہونے کا تخمینہ لگایا جارہا ہے۔

خیال رہے کورونا وائرس کے باعث مجموعی طور پر اب تک پی آئی اے کو سعودی عرب، متحدہ عرب امارات اور دیگر مشرق وسطی میں فضائی آپریشن محدود ہونے کی وجہ سے 30 ارب روپے سے زائد خسارے کا خدشہ ہے جبکہ یورپ، برطانیہ اور امریکہ میں فضائی آپریشن پر پابندی کی وجہ سےبھی شدید مالی دباؤ ہے۔