بھارت میں انصاف کا خون

71

تاریخی بابری مسجد کے مقدمے کا فیصلہ بھی مسلمانوں کے خلاف آیا، جس میں عدالت کے جج سریندر کمار یادیو نے فیصلہ سناتے ہوئے بابری مسجد کو شہید کرنے والے 32مرکزی ملزمان کو بری کردیا ہے۔ اس کیس میں کئی بھارتی بیوروکریٹ اور سابق نائب بھارتی وزیراعظم لال کرشن اڈوانی سمیت 49 لوگوں کو بھارتی سی بی آئی نے ملزم ٹھہرایا تھا۔ کیس کے طویل مدت دورانیے میں 17 ملزمان اب اس دنیا سے جاچکے ہیں لیکن اس تاریخی فیصلے کے موقع پر جو نامزد ملزمان زندہ تھے انہیں عدالت نے کارروائی کے دوران موجود رہنے کا حکم دیا تھا۔ بھارتی ریاست اترپردیش کے علاقے ایودھیا کے مقام پر مسلمانوں کی تاریخی عبادت گاہ بابری مسجد کو 6 دسمبر 1992ء کو ہندو انتہاپسندوں نے شہید کردیا تھا اور ان مناظر کی تصاویر اور وڈیوز انٹرنیٹ پر دنیا کے سامنے موجود ہیں، جسے شک ہو وہ ان مناظر کو دیکھ سکتا ہے۔
ہندو انتہا پسندوں اور ان کے شرپسند پشت پناہوں نے 28 برس پہلے سازش رچی اور مسلمانوں کی قدیم و تاریخی بابری مسجد کو بڑے منظم انداز میں شہید کیا۔ بعدازاں سرکاری سرپرستی میں ہندو مسلم فسادات کی آگ بھڑکائی گئی جس میں 2 ہزار مسلمان شہید اور درجنوں زخمی ہوئے۔ بابری مسجد کی شہادت کا کیس 3 دہائیوں سے بھارتی عدالتوں میں زیر سماعت تھا اور اس میں 3 بڑے مقدمات سمیت 5 درجن کے قریب ذیلی مقدمات کی سنوائی ہوتی رہی۔ اب اس کے ڈرامائی اختتام کو کسی بڑے طوفان کا پیش خیمہ کہا جائے تو برا نہیں ہوگا، کیوں کہ جس طرح سے ٹھوس اور واضح ثبوت کے باوجود اس مقدمے کے تمام مرکزی ملزمان کو چھوڑا گیا ہے، اس سے مذہبی فرقہ واریت، مسلکی عناد، اقلیتی غم و غصہ کو ہوا ملے گی۔
بھارت کی سابقہ حکومتوں کی نسبت مودی سرکار کے دور میں تمام اقلیتوں خصوصاً مسلمانوں کے خلاف انتہائی حد تک جنونیت اور نفرت کا مظاہرہ کیا جا رہا ہے۔ اس حوالے سے پوری دنیا بخوبی جانتی ہے کہ بھارت میں اقلیتوں کو مذہبی آزادی میسر نہیں۔ بی جے پی کا معاملہ سیاسی کم اور غاصبانہ یا متعصبانہ زیادہ لگتا ہے۔ موجودہ حکمراں جماعت کے پہلے اور پھر دوسرے دور حکومت میں مودی سرکار نے اقلیتوں کے ساتھ عموماً اور مسلمانوں کے ساتھ خصوصاً ظالمانہ رویہ اختیار کیا اور انصاف کی خوب دھجیاں اڑائیں۔ اب وقت ہے کہ دنیا اس طرف توجہ دے اور بھارت میں موجود لاکھوں اقلیتوں کی بھارتیہ جنتا پارٹی اور آر ایس ایس کے غنڈوں سے جان خلاصی کروائے۔
بھارتی عدالت کے اس یک طرفہ، متعصبانہ اور جانب دارانہ فیصلے سے تاریخی حوالوں کو بھی روندا گیا اور بابری مسجد اراضی کو ہندوؤں کے حوالے کرکے مسلمانوں کی ملکیت کو یکسر مسترد کردیا گیا۔ اس اقدام کو انصاف کے مسیحاؤں کی کھلی ہٹ دھرمی سے تعبیر کیا جاسکتا ہے۔ بھارتی عدالت نے رواں برس بابری مسجد کی جگہ پر رام مندر کی تعمیر کا حکم نامہ جاری کیا تھا، جس کا سنگ بنیاد نریندر مودی نے رکھا تھا۔ مودی کی بھارتیہ جنتا پارٹی کی فرقہ پرست ذہنیت کسی سے ڈھکی چھپی نہیں۔ گجرات میں مسلمانوں کا قتل عام بھی اسی مودی کے ایما اور خواہش پر ہوا تھا، لیکن اب جب سے مودی نے مرکز میں زمام اقتدار سنبھالی ہے، اسی وقت سے بابری مسجد کی طرف ان کی میلی آنکھیں جم گئیں تھیں۔
مودی نے اپنی دوسری باری میں انتخابی مہمات کے دوران عوام سے کشمیر کو بھارت کا اٹوٹ انگ بنانے کا وعدہ کیا تھا، جسے گزشتہ سال اگست میں کشمیر کی قانونی حیثیت ختم کرکے پورا کردیا تھا۔ اس غیر قانونی عمل سے لاکھوں کشمیریوں کی آزادی کو جبری قید میں بدل دیا گیا۔ آرٹیکل 370 اور 35 A کے خاتمے کے بعد کشمیریوں کو ایک برس سے زائد گزر چکا ہے کہ لاک ڈاؤن اور محصورین جیسی زندگی گزارنے پر مجبور کر رکھا ہے۔ بھارت کشمیر میں من مانیاں کررہا ہے اور نہتے کشمیری مسلمانوں پر ظلم و ستم کرکے مقبوضہ وادی میں انسانی حقوق کی دھجیاں اڑا رہا ہے۔ بھارت کی اسی انسانی حقوق کی پامالی کو مدنظر رکھتے ہوئے ’’ایمنسٹی انٹرنیشنل‘‘ نے بھارت میں اپنے دفاتر بند کرنے اور کام روکنے کا اعلان کردیا ہے۔ یہ تمام واقعات ثابت کرتے ہیں کہ بھارتی حکمران بلاشبہ ہندوتوا پالیسی پر گامزن ہیں۔
مسلمانوں کی قدیم اراضی اور مذہبی عبادت گاہ کو دن کی روشنی میں مسمار کردینا، مذہبی تشدد کو بھڑکانے کے زمرے میں آتا ہے۔ اس فیصلے سے مودی نے سیاسی قد تو اونچا کیا ہی ہے، ساتھ ہی مستقبل میں اقلیتوں کے حقوق پر بھی سوالیہ نشان لگادیا ہے۔ مودی کا انتخابی مہم میں یہ بھی وعدہ تھا کہ وہ بابری مسجد کی جگہ رام مندر تعمیر کرے گا۔ یہ وہ تعصبانہ مذہبی کارڈ ہے جسے خالصتاً مذہبی لبادہ پہنا کر سیاسی مقاصد حاصل کیے گئے۔ مودی نے بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کو قانونی حیثیت دلوانے، سنگ بنیاد رکھنے کے بعد بابری مسجد کو شہید کرانے اور کرنے والے مرکزی ملزمان کو آزاد کروا کر اپنے انتخاب کا ایک اور وعدہ پورا کردیا۔ جس سے وہ اپنی پارٹی کو ملک کی طاقت ور سیاسی جماعت کا روپ دینے میں مصروف عمل ہے تاکہ بھارت میں ہندوازم کا راستہ ہموار ہوسکے۔ اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی مودی کی قیادت میں کس تیزی سے بھارتی عوام کو ہندوتوا پالیسی کی جانب لے جارہی ہے۔
بابری مسجد کیس کا فیصلہ کسی طور بھی انصاف پر مبنی نہیں کہا جاسکتا۔ یہ انصاف کا خون ہے، جس سے بھارت کے چہرے پر اقلیتوں کے ساتھ غیر مساوی انصاف عیاں ہوتا ہے۔