تین ارب مربع میٹر رقبے پر بچھی بارودی سرنگیں

457

اقوام متحدہ نے اپنی رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ عراق کے 3 ارب مربع میٹر رقبے پر بارودی سرنگیں بچھی ہوئی ہیں۔

یونائیٹڈ نیشنز مائن ایکشن سروس کے سربراہ پیہر لوزامرنےکہا ہےکہ دو جنگوں کے دوران عراق کے 3ارب مربع میٹر رقبے پر بارودی سرنگیں اور بارودی مواد ابھی تک موجود ہے جس میں میں شمالی کردستان کا 25 کروڑ 73 لاکھ مربع میٹر کا علاقہ بھی شامل ہے۔

اقوام متحدہ کے مطابق داعش کا عراق کے مختلف علاقوں میں کنٹرول کے بعد بارودی سرنگوں اور بارودی مواد کا جال بچھایا گیا۔ داعش کا عراق کے کئی صوبوں پر کنٹرول تھا اس دوران دہشت گرد تنظیم نے سیکیورٹی فورسز کے حملوں سے بچنے کیلیے بڑے علاقے پر بارودی سرنگیں بچھائیں تھیں۔

اقوام متحدہ نے عراق کےنینوا، کرکوک، عنبار، صلادین اور دیالہ کے علاقوں میں بارودی سرنگوں کا سروے کیا، ان علاقوں میں بڑے پیمانے پر اب بھی ایکٹو بارودی سرنگیں موجود ہیں جن کو ناکارہ بنانے کی ضرورت ہے۔

اقوام متحدہ کا کہنا ہےکہ عراق کا صوبہ بصرہ بارودی سرنگوں سے سب سے زیادہ متاثر ہے، یہاں ایران عراق جنگ، 1991 کی خلیج جنگ اور 2003 میں عراق پر امریکی حملوں نے بارودی سرنگوں کا ایک جال بچھایا گیا۔

عراق دنیا کا بارودی سرنگوں اور بارودی مواد سے متاثر ہونے والا سب سے بڑا ملک ہے۔