امارات، بحرین اسرائیل معاہدہ، عمان کا خیرمقدم

221

مسقط: متحدہ عرب امارات اور بحرین کے اسرائیل سے تعلقات بحال ہونے پر عرب لیگ کے ایک اور ملک نے خیر مقدم کیا ہے۔

یواے ای اوربحرین کے اسرائیل کے کیساتھ تعلقات کی بحالی کو لے کرعمان نےاپنے تازہ بیان میں کہا ہے کہ دونوں ممالک کے صہیونی ریاست سے سفارتی تعلقات معمول پر آنے کی خوشی ہے۔

گزشتہ دنوں امریکی صدر نے اعلان کیا تھا کہ کہ بحرین اور اسرائیل سفارتی تعلقات قائم کرنے پر متفق ہو گئے ہیں، متحدہ عرب امارات کے بعد بحرین ایسی دوسری خلیجی ریاست ہے، جس نے اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کا فیصلہ کیا ہے۔

واضح رہے کہ عمان اور اسرائیل کے باقاعدہ سفارتی تعلقات نہیں تاہم  متحدہ عرب امارات اور بحرین کے عمان کے بھی اسرائیل سے خوشگوار تعلقات قائم ہوئے ہیں جبکہ اس بات کا بھی اندیشہ ہے کہ عرب لیگ کا تیسرا ملک عمان ہوگا جو جلد اسرائیل کے ساتھ تعلقات کا اعلان کرے گا۔

اس سے قبل اسرائیل وزیراعظم نیتن یاہو بحرین کے شاہی کاندان سے ملاقات کرچکے ہیں۔

Image may contain: 3 people, outdoor

یاد رہے کہ 1948 میں جب عرب اسرائیل جنگ چل رہی تھی تو اسی بحرین کی فوج اسرائیل کے خلاف صف آرا تھی اور فلسطینیوں کی آزادی کی جنگ لڑرہی تھی جبکہ اس کے الٹ آج بحرین کے شاہی خاندان نے اسرائیل کوتسلیم کرکے فلسطینیوں کو دھوکا دیا ہے۔