جماعت اسلامی نے افغان امن مذاکرات کو خوش آئند قرار دے دیا

98

کراچی ( اسٹاف رپورٹر ) جماعت اسلامی سندھ کے امیر و سابق ایم این اے محمد حسین محنتی نے دوحہ میں تاریخی افغان امن مذاکرات کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ فریقوں کے درمیان براہ راست مذاکرات افغانستان میں دائمی امن لانے کی جانب پیش قدمی کی علامت ہیں۔ان خیالات کااظہار انہوں نے ایک بیان میں کیا۔انہوں نے کہا کہ ناقابل شکست افغان طالبان کا ملک و قوم کی خاطر قیام امن کے لیے مذاکرات کی میز پر بیٹھنا قابل تحسین ہے، تاہم ضرورت اس امر کی ہے کہ مذاکرات کو نتیجہ خیز بنانے کے لیے فریقین کو اخلاص و سنجیدگی کا مظاہرہ کرنا ہوگا تاکہ افغانستان میں ایک وسیع البنیاد اسلامی حکومت کا قیام کا خواب شرمندہ تعمیر ہو سکے۔پاکستان و افغانستان کا امن و ترقی ایک دوسرے کے ساتھ جڑا ہوا ہے، افغانستان ہمارا برادر اسلامی و پڑوسی ملک ہے، افغانستان میں امن و خوشحالی ہوگی تو اس کے اثرات پاکستان پر بھی اچھے مرتب ہوں گے۔ان کا کہنا تھا کہ افغان امن مذاکرات ملکی خوشحالی اور قیام امن کی طرف اہم پیش رفت ثابت ہوں گے، ثابت ہوگیا کہ طاقت کا استعمال کسی بھی مسئلے کا حل نہیں ہے، پوری دنیا کی نظریں ان مذاکرات پر لگی ہوئی ہیں۔ افغانستان امریکی جارحیت اور خانہ جنگی کی وجہ سے بڑے عرصے سے عدم استحکام کا شکا رہے۔ بیرونی جارحیت کے باعث طالبان کو ایک طویل و صبر آزما جنگ لڑنا پڑی جو انہوں نے بڑی بے جگری کے ساتھ لڑی اور کامیاب رہے۔