بلوچستان سے وعدوں پر عمل نہیں ہوا : خصوصی پیکیج دینگے ، وزیر اعظم

62
کوئٹہ: وزیراعظم عمران خان بلوچستان میں سیلاب و کورونا صورتحال سے متعلق اجلاس کی صدارت کررہے ہیں

 

کوئٹہ(نمائندہ جسارت) وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ ماضی میں بلوچستان سے وعدے تو کیے گئے مگر عملدرآمد نہ ہو سکا، ہم خصوصی پیکیج دیں گے۔وزیراعظم جمعہ کو ایک روزہ دورے پرکوئٹہ پہنچے جہاں ان سے بلوچستان کی کابینہ کے ارکان نے ملاقات کی۔ اس دوران وفاقی وزیر برائے دفاعی پیداوار زبیدہ جلال، وفاقی وزیر برائے اطلاعات سینیٹر شبلی فراز، وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر، ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم خان سوری، وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان سمیت صوبائی وزرا بھی شریک تھے۔اس موقع پر عمران خان نے کہا کہ ہماری حکومت کی اولین ترجیح پسماندہ طبقات کی فلاح و بہبود اور پسماندہ علاقوں کی ترقی وخوشحالی ہے۔انہوںنے کہا کہ رقبے کے لحاظ سے بلوچستان پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے، یہاں ترقی کی بے پناہ صلاحیت اور مواقع موجود ہیں، بلوچستان میں ترقی کے حوالے سے ترجیحات مرتب کرنے کی ضرورت ہے، کچی کینال سے زرعی ترقی کے بے پناہ امکانات روشن ہو سکتے ہیں، ہم بلوچستان کے ہرعلاقے خصوصا جنوبی
بلوچستان کی ترقی و خوشحالی کے لیے تمام وسائل بروئے کار لائیں گے۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ عنقریب وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر بلوچستان کا دورہ کریں گے اور جنوبی بلوچستان کی ترقی کے لیے اسپیشل پیکیج مرتب کرنے کے حوالے سے مشاورت کریں گے۔ دوسری جانب اسد عمر نے شرکاء کو آگاہ کیا کہ وزارت منصوبہ بندی نے بلوچستان کی ترقی و خوشحالی کے حوالے سے ایک کوارڈی نیشن کمیٹی تشکیل دی ہے جس میں تمام اسٹیک ہولڈرز کی نمائندگی ہے۔