ستم……………اجمل سراج

85

کیا یاد دِلائیں اِسے ہم اس کی جفائیں
کس کس کا کریں ذکر کوئی ایک ستم ہے

اِس دورِ حکومت کے مصائب کا نہ پوچھو
اِس دورِ حکومت میں جو ہو جائے وہ کم ہے