پلیٹی لیٹس کیا ہیں؟

429

خون میں سرخ Red blood cells اور سفید خلیوں White blood cells کے علاوہ Platelets بھی ہوتے ہیں۔ پلیٹ لیٹس کا لفظ دراصل پلیٹ سے ماخوذ ہے۔ یہ جسم کے پولیس مین کا کردار ادا کرتے ہیں۔

جسم کے کسی حصے پر جب کٹ لگتا ہے اور خون نکلنے لگتا ہے خون کے یہ محافظ اس جگہ میں آکر پلیٹ کی طرح جمع ہو جاتے ہیں، دماغ کو سگنلز بھیجتے ہیں کہ مزید پلیٹ لیٹس ادھر آجائیں اور یوں سارے جمع ہو کر خون بہنے سے روکتے ہیں۔

ایک نارمل آدمی کے خون میں ان کی مقدار ڈیڑھ لاکھ سے ساڑھے چار لاکھ تک ہوتی ہے۔ ڈینگی میں یہ شدت سے ک  ہوتے چلے جاتے ہیں لیکن وہ بھی  آخری اسٹیج ہوتی ہے جب ان کی مقدار چند ہزار رہ جائے ۔اس اسٹیج پر Bleedingشروع ہو جاتی ہے جس سے بندے کی موت واقع ہو سکتی ہے۔

طبی ماہرین کے مطابق پلیٹ لیٹس دراصل انسانی جسم کے خون میں موجود پلیٹ کی شکل کے چھوٹے چھوٹے ذرات یعنی خلیات ہوتے ہیں اور ان کے گرد جھلی بنی ہوئی ہوتی ہے۔ ان کا کام انسانی خون کے جسم سے انخلا کو روکنا ہوتا ہے۔

پلیٹ لیٹس کی غیر موجودگی یا انتہائی کمی کی وجہ سے انسانی خون دماغ میں جمع ہو جاتا ہے جس وجہ سے کئی پیچیدگیاں جنم لے سکتی ہیں اور ممکنہ طور پر خون جسم سے باہر آنا شروع ہو سکتا ہے اور ان کی کمی برین ہیمرج کا سبب بھی بن سکتی ہے۔

صحت مند انسانی جسم میں پلیٹ لیٹس کی تعداد ڈیڑھ لاکھ سے ساڑھے چار لاکھ تک ہوتی ہے اور اس سے ہڈی کا گودا بھی ضرورت کے مطاق خود بخود بنتا رہتا ہے۔