امارات نے امت مسلمہ کو تقسیم کردیا

218

ضیا الرحمٰن ضیا
متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے درمیان ہونے والے معاہدے نے امت مسلمہ کو 2 حصوں میں تقسیم کردیا ہے۔ ایک حصہ عرب ملکوں کا ہے اور دوسرے حصے میں غیر عرب مسلم ممالک ہیں۔ عرب ممالک کے موجودہ حکمران اسرائیل کےلیے نرم گوشہ رکھتے ہیں، اسے تسلیم کرنے کی فکر میں رہتے ہیں جب کہ باقی غیر عرب مسلم دنیا کے ممالک نے اسرائیل کے بارے میں سخت موقف اپنا رکھا ہے اور اسے تسلیم کرنے سے صاف انکاری ہیں۔ وہ اسرائیل کو ناجائز ریاست کہتے ہیں، جو فلسطینیوں کی زمینوں پر قبضہ کرکے قائم کی گئی اور جسے دیرینہ مسلم دشمن ممالک امریکا و برطانیہ کی مکمل حمایت حاصل ہے۔ انہی کی حمایت کی وجہ سے اسرائیل نے فلسطینی مسلمانوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ ڈھائے، براہ راست شہری آبادیوں کو بمباری کا نشانہ بنایا، معصوموں اور نہتے شہریوں کو بے گھر کیا، مسلمانوں کے قبلہ اول پر قبضہ کرکے اس کی بے حرمتی کی۔ اس ظالم اور ناجائز ریاست نے جبر و تشدد کی کئی دلخراش داستانیں رقم کیں۔
آج عرب حکمران اسی ناجائز اور اپنے بھائیوں کی قاتل ریاست سے تعلقات بڑھانے کی فکر میں ہیں اور اپنے چند چھوٹے چھوٹے مفادات کی خاطر امت مسلمہ کے اتحاد اور مشترکہ بیانیے میں دراڑیں ڈال رہے ہیں۔ یہ مسلم ممالک اس سے قبل بھی تو اسرائیل کے بغیر زندگی بسر کر ہی رہے تھے، اب کون سی ایسی ضرورت پیش آگئی جو انہیں امت مسلمہ کے اجتماعی مفادات کو پس پشت ڈال کر ان کے بدترین ترین دشمن سے ہاتھ ملانے پر مجبور کررہی ہے؟ وہ اس دوستی کے نتیجے میں اسرائیل سے خیر کی توقع رکھتے ہیں، جسے نادانی کے سوا کچھ نہیں کہا جاسکتا۔
اسرائیل کو تو امریکا و برطانیہ کی مکمل اور واضح حمایت حاصل ہے۔ اس کی ایک بڑی مثال اس وقت دیکھنے میں آئی جب امریکی صدر ٹرمپ نے اپنا سفارتخانہ بیت المقدس میں منتقل کرنے کا اعلان کیا تھا۔ یعنی بیت المقدس پر قبضہ مضبوط کرنے کی خواہش اسرائیل سے بھی زیادہ امریکا کو ہے۔ اب امارات اسرائیل کو تسلیم کرنے جارہا ہے اور اس کا مقصد یہ بتا رہے ہیں کہ اس کے نتیجے میں اسرائیل فلسطینی علاقوں پر قبضہ نہیں کرے گا۔ حالانکہ عرب حکمران اچھی طرح جانتے ہیں کہ اسرائیل بہت زیادہ توسیع پسندانہ عزائم رکھتا ہے اور ان کے نظریات کے مطابق آدھی سے زیادہ عرب دنیا اسرائیلی ریاست ہے۔ جس کے حصول کےلیے وہ عملی طور پر کوششیں کررہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ کبھی ایک علاقے پر قبضہ کرلیتے ہیں تو کبھی دوسرے پر۔ انہوں نے اپنے توسیع پسند عزائم سے باز نہیں آنا، چاہے ہم کچھ بھی کرلیں۔
مصر نے جب اسرائیل کو تسلیم کیا اور وہاں اسرائیل کے سفارتخانے کے قیام کا وقت آیا۔ مصر میں دریا کے ایک طرف تمام ممالک کے سفارتخانے ہیں، وہیں انہوں نے اسرائیلی سفارتخانہ قائم کرنے کا ارادہ کیا تو اسرائیلیوں نے اس سے انکار کردیا اور کہا کہ ہمارے نظریات کے مطابق اس دریا تک ہماری ریاست ہے اور سفارتخانہ ریاست کے اندر نہیں ریاست کے باہر ہوتا ہے۔ اگر ہم اسی جگہ سفارتخانہ بنائیں جہاں باقی تمام ممالک کے سفارتخانے موجود ہیں تو ہمارا سفارتخانہ ہماری نظریاتی ریاست کے اندر آجائے گا، جو سفارتی قوانین کے خلاف ہے۔ لہٰذا ہم اپنا سفارتخانہ دریا کے پار بنائیں گے، وہ علاقہ ہماری نظریاتی ریاست میں نہیں ہے۔ اب دیگر ممالک کے سفارتخانے دریا کی ایک طرف جبکہ اسرائیل کا سفارتخانہ دریا کی دوسری طرف واقع ہے۔ اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ یہ لوگ کتنے مذموم عزائم رکھتے ہیں اور ان پر کتنی سختی سے عمل بھی کرتے ہیں۔ اس تناظر میں اگر دیکھا جائے تو ان سے کیسے توقع کی جاسکتی ہے کہ وہ فقط ایک معاہدے کے نتیجے میں مسلم دنیا کو نقصان پہنچانے سے باز رہیں گے اور اپنے توسیع پسندانہ عزام سے دستبردار ہوجائیں گے۔
عرب ممالک ان حقائق سے چشم پوشی کرکے اپنے عارضی مقاصد کی خاطر اسرائیل سے مراسم بڑھانے کی کوششیں کررہے ہیں۔ متحدہ عرب امارات نے اسرائیل سے معاہدہ کیا تو بحرین کے فرمانروا حمد بن عیسیٰ نے متحدہ عرب امارات کے ولی عہد الشیخ محمد بن زید النہیان کو ٹیلیفون پر مبارک باد دی اور کہا کہ امارات اور اسرائیل میں امن معاہدہ خطے میں امن کےلیے کی جانے والی کوششوں کو آگے بڑھانے میں مدد دے گا۔ انہوں نے اسے جرأت مندانہ قدم بھی قرار دیا۔ دیگر عرب ممالک بھی اس معاہدے پر خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں کیونکہ ان میں سے کچھ تو پہلے ہی اسرائیل کے ناجائز وجود کو تسلیم کرچکے ہیں یا تسلیم کرنے کے حق میں ہیں لیکن اس سلسلے میں ایران، ترکی اور پاکستان کی طرف سے شدید الفاظ میں مذمت کی گئی اور اسے بہت بڑی غلطی اور فلسطین کاز سے غداری قرار دے رہے ہیں۔ ایران نے اسے ٹرمپ کے الیکشن جتوانے کی سازش اور اسرائیل کو عرب میں مزید قدم جمانے کا موقع دینے کے مترادف قرار دیا ہے۔ اسی طرح ترکی نے بھی اس کی شدید مذمت کرتے ہوئے متحدہ عرب امارات سے سفارتی تعلقات منسوخ کرنے پر غور شروع کردیا ہے۔ پاکستان نے اس معاہدے پر ردعمل دیتے ہوئے واضح کیا کہ اسرائیل سے دوستی ممکن نہیں اور کہا کہ اس معاہدے کے دور رس مضمرات ہوں گے۔
اس معاہدے کے نتیجے میں متحدہ عرب امارات دیگر مسلم ممالک کو بھی اسرائیل کو تسلیم کرنے پر قائل کرے گا اور چھوٹے ممالک بالخصوص عرب ممالک اسے تسلیم کرتے چلے جائیں گے۔ اسرائیل پہلے تو انہیں سہانے خواب دکھائے گا اور بہت سے وعدے کرے گا۔ جب بہت سے ممالک اسے تسلیم کرلیں گے اور وہ اپنے اہداف حاصل کرلے گا تو پھر مختلف بہانوں سے دوبارہ اپنے توسیع پسند عزائم کو عملی جامہ پہنانے کےلیے سرگرم ہوجائے گا۔
لہٰذا تمام مسلم ممالک کو ذاتی مفادات کے بجائے امت مسلمہ کے اجتماعی مفادات کو مدنظر رکھنا چاہیے اور او آئی سی کی تنظیم کو مضبوط کرتے ہوئے وہاں سے مشترکہ بیانیہ اپنانا چاہیے اور تمام ممالک اس تنظیم کے ذریعے باہم مشاورت سے کوئی نیا قدم اٹھائیں تو یہ امت مسلمہ کے حق میں نہایت سودمند ثابت ہوگا۔