قائد اعظم محمد علی جناح اور پاک بحریہ زبیر اعظم

90

 

دنیا میں بہت کم رہنما اور قائد ایسے گزرے ہیں جن میں مستقبل کے حالات کو اچھے طریقے سے جانچنے اور اس کے حوالے سے تیاری رکھنے کی صلاحیت موجود ہو۔ بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح میں یہ دونوں ہی خوبیاںموجود تھیں۔انہوں نے نہ صرف انگریزوں اور کانگریس سے آزادی حاصل کی بلکہ وہ اس بات سے بھی بخوبی واقف تھے کہ ایک نئے ملک کو کیا مسائل در پیش آسکتے ہیں۔ یورپ میں رہتے ہوئے بھی قائداعظم محمد علی جناح نے پہلی جنگِ عظیم اور اس کو روکنے کے لئے دوسرے ملکوں کی ناکامی کی وجوہات کا بغور جائزہ لیا۔
23 جنوری1948 ءکو نو تشکیل کردہ پاک بحریہ کے افسران سے پی این ایس دلاور میں خطاب کرتے ہوئے قائداعظم ؒنے خبردار کر دیا کہ پاکستان مشکل حالات میں دوسرے ممالک سے مدد اور تعاون کی توقع نہ رکھے۔انہوں نے کہا کہ ”پاکستان کو تمام واقعات اور خطرات کے لےے تیارر ہنا چاہےے۔ اس دنیا میں ہم کمزور اور دفاعی صلاحیت سے محروم ہوگئے تو دوسرے ممالک کو جارحیت کی دعوت دیں گے۔امن قائم رکھنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ جو ہمیں کمزور سمجھتے ہیںاور اس بنا پر ہمیں دبا سکتے ہیں، ان کے دلوں سے یہ گمان نکال دیا جائے“۔
نو آموز پاکستان کی جغرافیائی اہمیت اور پاکستان کے دشمنوں کو مدِنظر رکھتے ہوئے قائد نے جان لیا تھاکہ پاکستان کو مضبوط مسلح افواج کی اشد ضرورت ہے۔ انہوںنے ملکی بحری سرحدوں کی حفاظت اور مستقبل میں اس نئے ملک کی معیشت کی نگہبانی کے لیے پاکستان بحریہ کو سب سے اہم سمجھا ۔ 23جنوری1948 ءکو قائداعظم ؒنے پاکستان کی بحری افواج کے افسران سے خطاب کیا اور صحت کمزور ہونے کے باوجود اپنے تاریخی خطاب سے ماحول میںجوش و خروش بڑھادیا ۔پاک بحریہ کے حوالے سے ان کے خطاب کے کچھ اہم نکات درج ذیل ہیں۔
” پاکستان ایک نو آموز مملکت ِخداداد ہے۔ اس کی بحریہ اور مسلح افواج بھی نئی ہیں ۔پاکستان کے نئے ہونے کا مطلب ہے ”ترقی کرنا “ اور خداکی رحمت اور مدد سے ہم جلد ہی لوگوںکی توقعات سے کہیں زیادہ ترقی کرلیں گے۔ تعداد میں کم ہونے کے باوجود ہماری افواج کمزور نہیں۔ان کے حوصلے، جذبے اور عزائم بہت بلند ہیں ۔ پوری دنیا کی نظریں آپ پر ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ اپنے روےے اور طرز ِعمل سے آپ پاکستان کو کبھی جھکنے نہیں دیں گے اور دیگر عظیم قوموں کی طرح بہترین روایات کو مدِ نظر رکھتے ہوئے ملک کی عزت و وقار بلند کریں گے۔“
قائد اعظم ؒکے یہ الفاظ پاک بحریہ کے لےے ہر مشکل وقت میںحوصلہ افزائی اور رہنمائی کا باعث بنے ہیں ۔ پاک بحریہ کے افسران اور جوان قائداعظم کی تلقین پر عمل پیراہیں۔ قیامِ پاکستان کے ابتدائی دور میںقائد اعظم ؒ کے کردار اور ان کے خطاب نے پاک بحریہ کے افسران کو احساس دلایا کہ قیامِ پاکستان کے ابتدائی سالوں میں وہ جو کریں گے وہ پاکستان کی بقا کے لئے ضروری ہوگا۔ وہ اس بات سے بخوبی واقف تھے کہ پاکستان کے دشمن بھارت سے پاکستان کی بحری سرحدوں کو محفوظ رکھنے کے لئے پاک بحریہ ہی ملک کے تحفظ اور خوشحالی کی ضمانت ہے۔
پاک بحریہ کے پاس ابتداءمیں محدود وسائل تھے ، 1947ءسے اب تک پاک بحریہ نے بہت ترقی کی ہے۔ مقابلہ بہت سخت تھا مگر قائداعظم کی امیدوں کی عکاس ایک چھوٹی فورس میں جذبے، ہمت ،عزم اور جیتنے کی خواہش نے پاک بحریہ کو اتنا مضبوط بنایا کہ اس کا شمار دنیا کی بہترین بحری افواج میں ہونے لگاہے۔
ابتدائی سالوں میں بحری فوج کے ہر فرد نے انتھک محنت، جذبے اور کوشش سے پاک بحریہ کی ترقی میں اہم کردار ادا کر کے قائد کے خواب کی عملی تعبیر حاصل کر لی۔اس وقت سمندری حدود میں اضافہ، دہشتگردی، اسمگلنگ، قزاقی، سمندری اور زمینی سیکورٹی اور شپنگ لینز کی سیکورٹی جیسے تمام فرائض و چیلنجز کو پاک بحریہ بہ طبریقِ احسن سر انجام دے رہی ہے۔ اور عہد حاضر کی ضرو ریات کے مطابق پاک بحریہ کو جدید دفاعی اور حربی صلاحیتوں سے لیس کرنے میں مصروفِ عمل ہے کیونکہ ہم جانتے ہیں کہ وسائل محدود ہیں اور دشمن کی عددی طاقت بہت زیادہ ہے مگر ہمارا جذبہ ایمانی اور قائد کا ہم پر یقین ہمارے حوصلے پشت نہیں ہونے دیتا اور پاک بحریہ ہر مشکل گھڑی میں دفاعِ وطن کیلئے تیار ہے۔