سپریم کورٹ نے یوٹیوب بند کرنے کا عندیہ دے دیا

400

ٓاسلام آباد: پاکستان کی سب سے بڑی عدالت سپریم کورٹ آف پاکستان نے ملک میں یوٹیوب بند کرنے کاعندیہ دے دیا۔ سپریم کورٹ نے یوٹیوب پر نوٹس فرقہ وارانہ جرم میں ملوث شوکت علی کی ضمانت کے مقدمے میں لیا۔

دوران سماعت جسٹس قاضی امین نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ہمیں آزادی اظہاررائے سے کوئی مسئلہ نہیں ،ہماری کارکردگی اورفیصلوں پر عوام کو بات کرنے کاحق ہے ،نجی زندگی کاحق بھی ہمیں آئین دیتا ہے۔

جسٹس قاضی امین نے استفسار کیا کہ کیا ایف آئی اے اور پی ٹی اے نے دیکھا ہے یوٹیوب پر کیا ہورہاہے؟،جسٹس قاضی امین نے کہاکہ یوٹیوب اورسوشل میڈیا پر ہمارے خاندانوں کو بخشانہیں جاتا ،کوئی یوٹیوب پر چاچاتوکوئی ماما بن کر بیٹھ جاتا ہے۔

جسٹس قاضی امین نے کہاکہ ججز کو شرمندہ کیا جاتاہے ،کل ہم نے فیصلہ دیا اوروہ یوٹیوب پر شروع ہو گیا،ہم تحمل کامظاہرہ کررہے ہیں آخر اس کااختتام توہونا ہے۔

پی ٹی اے حکام نے کہاکہ ہم انفرادی مواد کو ہٹا نہیں سکتے ،صرف رپورٹ کر سکتے ہیں ،جسٹس مشیر عالم نے کہاکہ کئی ممالک میں یوٹیوب بند ہے ،امریکااوریورپی یونین کیخلاف مواد یوٹیوب پر ڈال کردکھائیں۔

جسٹس قاضی امین نے کہاکہ ایسے جرم کے مرتکب کتنے لوگوں کیخلاف کارروائی ہوئی؟، فوج  عدلیہ اورحکومت کیخلاف لوگوں کو اکسایا جاتا ہے،عدالت نے وزارت خارجہ اوراٹارنی جنرل کو نوٹس جاری کردیئے۔