لاہور ہائیکورٹ‘موبائل کمپنیز کی سگنلز کا مسئلہ جلد حل کرنیکی یقین دہانی

116

لاہور (نمائندہ جسارت) موبائل کمپنیزکی جانب سے لاہور ہائیکورٹ کو موبائل سگنلز کے مسئلے کو رواں ماہ کے آخر تک حل کرنے کی یقین دہانی کر ادی گئی جبکہ چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس محمد قاسم خان نے ہائیکورٹ کے احاطے میں موبائل ٹاور لگانے کی اجازت طلب کرنے پر کہا کہ ہم ہائیکورٹ کی زمین بیچیں گے اورنہ لیز پر دیں گے ،موبائل کمپنی نے حل ڈھونڈنا ہے اور سگنل کا مسئلہ حل کرنا ہے۔چیف جسٹس نے جوڈیشل ایکٹوازم پینل کی درخواست پر سماعت کی۔ دوران سماعت چیف جسٹس محمد قاسم خان نے استفسار کیا وفاقی وزیر آئی ٹی اور چیئرمین پی ٹی اے عدالت میں موجود ہیں ،جس پر چیف جسٹس کو بتایا گیا کہ وفاقی وزیر کابینہ میٹنگ کی وجہ سے عدالت میںپیش نہیں ہو سکے جبکہ چیئرمین پی ٹی اے عدالت میں موجود ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ وفاقی وزیر کے جواب میں تضاد ہے، انہوں نے اپنے جواب میں لکھا ہے ان کے پاس اختیار نہیں کہ وہ موبائل سگنلز کے معاملے کو دیکھیں ۔دوسری جانب وفاقی وزیر نے ہی متعلقہ حکام کو معاملہ حل کرنے کے لیے خط بھی لکھا ہے۔عدالت میں وفاقی وزیر کے نمائندے نے اپنی غلطی کا اعتراف کر لیا جس پر چیف جسٹس نے کہاکہ غلطی نہیں ہوئی آپ نے عدالت کو گمراہ کرنے کی کوشش کی ہے ،یہ تو توہین عدالت ہے ،وفاقی وزیر نے تو خود اپنے جواب پر دستخط کیے کیا انہوں نے دیکھا نہیں ۔چیف جسٹس نے کہا کہ وفاقی حکومت کے وکیل وزیر کے مبہم جواب سے متعلق عدالت میں جواب جمع کرائیں ۔ وفاقی وزیر کو بتا دیں کہ آئندہ عدالت میں غلط بیانی کی کوشش کی تو کارروائی ہو گی۔موبائل کمپنیز کے وکیل نے عدالت میں کہا کہ اس ماہ کے آخر تک موبائل سگنلز کا مسئلہ حل کر دیں گے جس کے بعد سماعت ملتوی کر دی گئی ۔