جعلی لائسنس ‘ ڈگریوں کا معاملہ: ایوی ایشن نے رپور ٹ عدالت عظمیٰ میں جمع کرا دی

67

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)قومی ائر لائن(پی آئی اے) میں پائلٹس کے جعلی لائسنس اور ڈگریوں کے معاملے پر سول ایوی ایشن اتھارٹی نے رپورٹ عدالت عظمیٰ میں جمع کرا دی۔یاد رہے کہ 25 جون کو سماعت کے دوران چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد نے پائلٹس کے جعلی لائسنسز کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی جی سول ایوی ایشن سے 2 ہفتے میں جواب طلب کیا تھا۔ایوی ایشن نے رپورٹ جمع کراتے ہوئے کہا کہ پی آئی اے کے 450 پائلٹس ہیں، پی آئی اے سمیت نجی ائر لائنز کے 1934 پائلٹس کولائسنس جاری کیے۔ رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ 16 مشتبہ ڈگری والے پائلٹس میں سے 8 کومعطل کیاگیا، انکوائری بورڈنے 262 پائلٹس کے مشتبہ لائسنس کی نشاندہی کی، جعلی لائسنس والے پائلٹس نے امتحان میں حصہ نہیں لیاتھا۔ سول ایوی ایشن اتھارٹی کی رپورٹ کے مطابق 54 پائلٹس کے لائسنس معطل کر کے دوبارہ تصدیق کی جارہی ہے، پی آئی اے 141، سیرین 10 اور ائر بلیو کے 9 پائلٹس گراؤنڈ کیے۔رپورٹ کے مطابق ائرلائنز کے علاوہ 102 دیگر پائلٹس گراؤنڈ کیے گئے، وفاق کو 54 میں سے 28 پائلٹس کے لائسنس منسوخ کرنے کی سمری ارسال کی گئی، 208 مشتبہ لائسنس والے پائلٹس میں سے 34 کومعطلی کیاحکامات جاری کیے گئے ہیں۔