جھڈو: خریف کی تیار فصلوں پر ٹڈی دل کا حملہ ، آبادگار پریشان

82

 

جھڈو (نمائندہ جسارت) تحصیل جھڈو کے درجنوں دیہات میں خریف کی تیار فصلوں پر ٹڈی دل کا حملہ، ٹڈی دل کے حملے سے سرخ مرچ اور کپاس کی تیار فصلوں کو جزوی طور پر نقصان پہنچا، کسانوں کی تھال، خالی ڈبے بجا کر اور شور مچا کر فصلوں پر بیٹھی ٹڈی کو بھگانے کی کوشش، محکمہ زراعت کی جانب سے انسداد ٹڈی مہم کے سلسلے میں متاثرہ دیہات میں ٹڈی دل کے خاتمے کے لیے اسپرے کیا گیا۔ جمعرات کو تحصیل جھڈو کی یونین کونسل باکھر کے گاؤں کرم علی لغاری، گاؤں علی بخش کپری، گاؤں میر طارق تالپور، نجمہ شوگر ملز کے علاقوں میں سرخ مرچ اور کپاس کی تیار فصلوں پر لاتعداد ٹڈی دل نے حملہ کرکے فصلوں کو جزوی طور پر نقصان پہنچایا، جس پر کسانوں، آبادگاروں اور ہاریوں نے تھال اور خالی ڈبے بجا کر اور شور مچا کر فصلوں پر بیٹھی لاکھوں ٹڈیوں کو بھگانے کی کوشش کی۔ واضح رہے کہ گزشتہ روز سے عمرکوٹ اور میرپور خاص اضلاع کے بیشتر علاقوں میں لاکھوں کی تعداد میں ٹڈی دل کی نقل و حرکت دیکھی جا رہی ہے۔ تحصیل جھڈو کی یونین کونسل میر اللہ بچایو تالپور اور یو سی میر خدا بخش تالپور کے درجنوں دیہات میں بھی لاکھوں کی تعداد میں ٹڈی دل آسمان پر اڑتے ہوئے نظر آئے۔ آ باد گاروں کا کہنا ہے کہ ٹڈی دل کی جانب سے سرخ مرچ اور کپاس کی تیار فصلوں پر مزید حملوں اور محکمہ زراعت کی جانب سے بروقت اسپرے نہ کرنے کی صورت میں تحصیل جھڈو کے درجنوں آبادگاروں کو کروڑوں روپے کے نقصان کا خدشہ ہے۔ دوسری جانب محکمہ زراعت تحصیل جھڈو کے مقامی فیلڈ آ فیسر اشفاق لغاری کی نگرانی میں تحصیل جھڈو کے متاثرہ دیہی علاقوں میں پاور اسپرے مشین کے ذریعے ٹڈی دل کے انسداد کے لیے زہریلی دوا کا اسپرے کیا گیا اور پہلے مرحلے میں دو سو ایکڑ سے زائد زرعی زمین پر ٹڈی کے خاتمے کے لیے زہریلی دوا کا اسپرے کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں ڈپٹی ڈائریکٹر محکمہ زراعت میرپور خاص سترام داس نے صحافیوں کو بتایا کہ سندھ کی زرعی معیشت کو تباہ کرنے والی ٹڈی دل کو مارنے کے لیے محکمہ زراعت کے پاس زہریلی دوا موجود ہے۔ ضلع بھر میں کسی بھی علاقے میں ٹڈی دل کے حملے کی صورت میں مقامی آ بادگار اور کسان فوری طور پر محکمہ زراعت کے مقامی فیلڈ اسٹاف کو آگاہ کریں۔