نقطہ نظر

140

ممنوعہ بور کے ہتھیاروں کی ممانعت
ملک کے اراکین پارلیمنٹ کو ہر شخص عزت اور اس امید کی نگاہ سے دیکھتا ہے کہ ملک کو امن، ترقی، مساوات اور انصاف کی طرف گامزن کرنے کے لیے ان کی دانش مندی، ان کا وژن اور ان کی اہلیت مفید ثابت ہوگی۔ لیکن یہ دیکھ کر حیرت اور مایوسی ہوئی کہ ہماری سینیٹ نے 8 جون کو درج ذیل متفقہ قرارداد کو منظور کیا۔
’’ایوان نے متفقہ طور پر تمام ارکان پارلیمنٹ اور گریڈ 20 اور اس سے اوپر کے سرکاری افسران کو ممنوعہ بور اسلحہ لائسنس کے اجراء کے لیے ایک قرارداد منظور کی‘‘۔ (ڈان، 9 جون)
کیا سینیٹ نے کبھی مزدوروں، مکینکس، پوسٹ مینوں یا کلرکوں کے لیے ممنوع بور ہتھیاروں کے لیے متفقہ قرارداد منظور کی ہے؟ جی نہیں، انہوں نے یہ کام صرف اپنے اور گریڈ 20 اور اس سے اوپر کے افسران کے لیے کیا ہے۔ انہوں نے متفقہ طور پر نہ صرف اپنے ضمیر کی آواز کا گلا گھونٹا ہے، بلکہ آئین کے آرٹیکل 25 کی بھی خلاف ورزی کی ہے، جس میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ ’’قانون کے سامنے تمام شہری برابر ہیں‘‘۔
2011 تک اس طرح کی مشکوک اور ذاتی مراعات حاصل کرنے والی قراردادوں پر زور دیتے ہوئے، ہمارے پارلیمنٹیرینز نے ممنوعہ بور کے 69 473 ہتھیار اکٹھے کیے ہیں۔ اس طرح کہا جاسکتا ہے کہ بدقسمتی سے ہمیں دنیا کی سب سے اچھی مسلح پارلیمنٹ ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ آئین کا آرٹیکل 256 جو تمام نجی ملیشیا کو ممنوع قرار دیتا ہے، کی صریح خلاف ورزی کرتے ہوئے بیش تر پارلیمنٹیرینز کے پاس متعدد ذاتی مسلح محافظ ہیں۔ کیا پاکستان کے پارلیمنٹیرینز ایک ایسا معاشرہ بنانا چاہتے ہیں جو ہتھیار کسی کے لیے نہیں کے بجائے کسی کے لیے ہتھیاروں پر یقین رکھتا ہے؟ کیا ہماری پارلیمنٹ میں کوئی بھی ایسا باضمیر سینیٹر نہیں ہے جو سرعام اس قرارداد کو عوامی طور پر مسترد کرے اور مطالبہ کرے کہ اسے واپس لیا جائے۔
نعیم صادق کراچی