ٹنڈوالہیار ،محکمہ پبلک ہیلتھ کی نااہلی علاقوں میں گندا پانی جمع ہونے لگا

50

ٹنڈوالہٰیار (نمائندہ جسارت) ٹنڈوالہٰیار کے ڈسپوزل کا نظام ناکارہ ہوگیا۔ بارشوں سے قبل نالوں کا گندا پانی علاقوں کی زینت بن گیا، محکمہ موسمیات کی جانب سے بارشوں کی پیشنگوئی کے باوجود محکمہ پبلک ہیلتھ تاحال نالوں کی صفائی نہ کراسکی، شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا، گندے پانی سے گزرنے پر مجبور۔ حکومت سندھ کی جانب سے محکمہ پبلک ہیلتھ کو ٹنڈوالہٰیار کے نالوں کی صفائی کی ذمے داری سونپ دی گئی تھی لیکن دو سال گزر جانے کے باوجود محکمہ پبلک ہیلتھ کے افسران نے نالوں کی صفائی شروع نہیں کی جس کے باعث انڑ محلے سمیت دیگر علاقوں کی گلیاں تالاب کا منظر پیش کررہی ہیں۔ جس کے باعث علاقہ مکینوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ علاقہ مکینوں نے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ پبلک ہیلتھ کی نااہلی کی وجہ سے ہمارے علاقوں میں گندا پانی جمع ہوگیا ہے اور ہم گھروں تک محدود ہوچکے ہیں۔ اگر بارش ہوگئی تو ہمارے گھر ڈوب جائیں گے۔ نالوں کے گندے پانی سے مختلف بیماریاں جنم لے رہی ہیں لیکن پبلک ہیلتھ کے افسران کے کان میں جوں تک نہیں رینگ رہی۔ میونسپل کمیٹی ٹنڈوالہٰیار کے چیئرمین سید امداد حسین شاہ رضوی نے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ نالوں کی صفائی مارچ اور اپریل کے مہینے میں ہوجانی چاہیے۔ مون سون کی بارشیں شروع ہونے والی ہیں ہم نے کمشنر حیدر آباد اور ڈپٹی کمشنر ٹنڈوالہٰیار کو لیٹر ارسال کیے ہیں کہ وہ محکمہ پبلک ہیلتھ کو ہدایات کریں کہ وہ مین نالوں کی صفائی کریں تاکہ آنے والی بارشوں میں عوام کو مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر پبلک ہیلتھ نالوں کی صفائی نہیں کراسکتی تو ہمارے حوالے کیے جائیں، صفائی ہم کرا دیں گے۔ شہری حلقوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت نالوں کی صفائی کے لیے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کرے۔