امریکی سیاہ فام شہری کی ہلاکت کیخلاف احتجاج پورے امریکا میں پھیل گیا

187

امریکہ کے سیاہ فاہ شہری کے قتل کے بعد امریکی ریاستوں منیسوٹا، ٹیکساس، کیلیفورنیا، نیویارک سمیت مختلف ریاستوں میں مظاہرے آج بھی جاری ہیں۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق امریکی حکومت سیاہ فام شہری کے قتل سے پیدا صورتحال کنٹرول کرنے میں ناکام ہوگئی ہے، کیلیفورنیا میں مظاہرین کی فائرنگ سے ایک پولیس اہلکار ہلاک اور اسکا ساتھی زخمی ہوگیا تھا، جس کے بعد 6 امریکی ریاستوں میں نیشنل گارڈ کی تعیناتی شروع کردی گئی۔

امریکا میں احتجاج کرنیوالے جلاؤ گھیراؤ، لوٹ مار کے بعد پولیس پرحملے بھی کررہے ہیں تاہم امریکا میں کرفیوکا دائرہ دیگرشہروں تک بڑھادیا گیا مگرپرتشدد مظاہروں پرقابو نہ پایا جاسکا، جلاؤ گھیراؤ کو روکنے کیلئے گورنر منیسوٹا نے ٹرمپ انتظامیہ سے فوج بھیجنے کی بھی درخواست کردی۔

پولیس حراست میں سیاہ فام شخص کی ہلاکت کیخلاف احتجاج پورے امریکا ...

امریکی ریاست اٹلانٹا میں مظاہرین نے سی این این کے دفتر پربھی حملہ کیا اور عمارت کو نقصان پہنچایا، سیاہ فام شہری کی تشدد سے ہلاکت کے خلاف وائٹ ہاؤس کے باہربھی احتجاج جاری ہے جبکہ بعض مظاہرین کی رکاوٹ عبور کرکے وائٹ ہاؤس میں داخل ہونے کی بھی کوشش کی اور مطالبہ کیا کہ چاروں اہلکاروں کیخلاف فرسٹ ڈگری قتل کیس کے تحت کارروائی کی جائے۔

 

دسری جانب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ مظاہرین وائٹ ہاؤس میں داخل ہوئے تو خونخوارکتوں، سیکیورٹی اہلکاروں کا سامنا کرنا پڑیگا۔