حکومت سندھ سے محکمہ تعلیم کے اخراجات آڈٹ کرانے کا مطالبہ

114

کراچی(اسٹاف رپورٹر)پاکستان تحریک انصاف کراچی ریجن کے صدر خرم شیر زمان نے کہا ہے کہ وزیراعلیٰ سندھ کی ایجوکیشن ایمرجنسی سندھ کے عوام کے لیے ایک ڈراؤنا خواب بن چکی ہے۔ہم حکومت سندھ سے گزشتہ 10 سالوں سے محکمہ تعلیم کے تمام اخراجات کا فرانزک آڈٹ کرانے کا مطالبہ کرتے ہیں۔میڈیا سیل انصاف ہاؤس سے جاری کردہ ایک بیان میںخرم شیر زمان نے سندھ کے لیے سالانہ معیار تعلیم کی رپورٹ (ASER) 2019 ء کے نتائج سے مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پی پی پی حکومت تعلیم پر پچھلے 6 سالوں میں تقریباً 800 ارب روپے خرچ کر چکی ہے۔ ASER 2019ء کی رپورٹ اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ سندھ میں تعلیم کا نظام انتہائی خراب اور تباہی کا شکار ہے۔خرم شیر زمان نے کہا کہ اگر تعلیم کے موجودہ اخراجات کا 70فیصد پرائمری اور سیکنڈری سطح کی تعلیم پر خرچ کیا جاتا ہے تو پھر سندھ میں تعلیم کا نظام اتناناقص کیوں ہے؟ یہ سارا پیسہ کہاں جارہا ہے؟ پی ٹی آئی کراچی ریجن کے صدرنے مطالبہ کیا ہے کہ وزیر اعلیٰ اور محکمہ تعلیم اس بات کی تحقیقات کے لیے ایک کمیشن تشکیل دیں کہ یہ سارا پیسہ کہاں جارہا ہے ؟