گاڑی و فون چھیننے کی 15 ہزار وارداتیں صرف 307 مقدمات درج

159

کراچی (اسٹاف رپورٹر) شہر میں گزشتہ 5ماہ کے دوران موٹر سائیکلیں، گاڑیاں اور موبائل فون چھیننے یا چوری کی 15082وارداتوں میں سے صرف307 کے مقدمات درج ہوئے ،کراچی پولیس کی جانب سے وِکٹم سپورٹ یونٹ کی کا رکردگی رپورٹ جاری کردی گئی،کراچی پولیس آفس میں قائم اس یونٹ سے گزشتہ 5 ماہ میں گاڑیوں اور موبائل فون چھیننے یا چوری کی وارداتوں سے متاثرہ15082شہریوں نے رابط کیا، جس میں سے8566سے موٹرسائیکلیںیاگاڑیاںاور 6506سے موبائل فون چوری یا چھینے گئے تھے۔ تفصیلات کے مطابق وِکٹم سپورٹ یونٹ روزانہ کی بنیاد پر موبائل فونز، موٹرسائیکلیں اور دوسری گاڑیوں کے چوری یا چھیننے کے متاثرہ افراد سے ان کے فراہم کردہ فون نمبرز پر رابطہ کرتاہے ۔اس یونٹ کے قیام سے اب تک 6506 موبائل فونز چھینے یا چوری کیے گئے جس پر ان کے دیے گئے فون نمبرز پر 5668 متاثرہ شہریوں سے رابطہ ہوا جبکہ 838 مالکان کے فون نمبرز پر کال اٹینڈ نہیں کی گئی اور صرف 32 مالکان نے ایف آئی آر (FIR) کے اندراج پر رضامندی ظاہر کی جن کی ایف آئی آر درج کرادی گئیں۔اسی طرح 14 اکتوبر 2019ء سے 21 فروری 2020ء تک 8566 وہیکلز چوری یا چھینی گئیں۔ 7079 مالکان کے دیے گئے فون نمبرز پر رابطہ ہو سکا جبکہ 1487 نے فون کالز اٹینڈ نہیں کی، جبکہ 275 مالکان نے فوری ایف آئی آرکا اندراج کرایا۔ ایڈیشنل آئی جی کراچی غلام نبی میمن نے پیش کردہ رپورٹ کے جائزے کے بعد شہریوں سے اپیل کی ہے کہ اس قسم کی وارداتوں کی فوری طور پر رپورٹ ایف آئی آر (FIR) درج کرائی جائے تاکہ ان جرائم پیشہ افراد کو قرار واقعی سزا دِلائی جاسکے۔ عوام کے تعاون کے بغیر پولیس اِن ملزمان کو ان کے انجام تک نہیں پہنچا سکتی۔