ڈی آئی جی ساو¿تھ شرجیل کھرل نے کہا کہ گزشتہ 6 سال سے پولیس میں کافی تبدیلی آ ئی ہے،

76
کراچی ( اسٹاف رپورٹر)روزن اور لیگل رائٹ فورم کے زیر اہتمام وومن پروٹیکشن اینڈ ایڈوکیسی فور پولیس ریفارم اینڈ رول مہران ہوٹل میں منعقد ہوا۔
ڈی آئی جی ساؤتھ شرجیل کھرل ، روزن کے پروجیکٹ ڈائریکٹر لینڈ محمد علی۔۔ لیگل رائٹ فورم کے فوکل پرسن۔ منظور حسین۔۔ صوبائی پبلک سیفٹی اینڈ پولیس کمپلین کے کرامت علی۔۔۔ عورت فاؤنڈیشن کی منہاز رحمان۔۔ سندھ کمیشن کی چیئرپرسن نزہت شیریں اور مختلف این جی اوز کے نمائندوں اے ایس پی کلفٹن۔ زاہدہ پروین اور ساؤتھ زون پولیس کے افسران نے شرکت کی۔
روزن کے محمد علی نے شرکاء کو پولیس اصلاحات کے حوالے سے تفصیلی پریزنٹیشن دی  اور کہا کہ محکمہ صحت ، تعلیم اور دیگر کے ساتھ ساتھ پولیس میں اصلاحات ضروری ہے اور پولیس میں سیاسی مداخلت کا خاتمہ اور پولیس کا مثبت تاثر اجاگر کرنے کے لیے اقدامات کرنا شامل ہیں۔
دیگر مقررین نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ ڈی آئی جی ساؤتھ نے اپنے خطاب میں کہا کہ سندھ پولیس کا 60 فیصد کراچی میں ہے۔ریفارم سے پہلے سروایو کی بات آ تی ہے۔ گزشتہ 6 سال سے پولیس میں کافی تبدیلی آ ئی ہے۔  بہتر ماحول میں آ رہے ہیں۔ ھمارے پاس موقع ہے کہ ریفارم کو شروع کریں۔ایکٹ کوئی بھی ہو جس چیز میں امپرومنٹ کی ضرورت ہو کوئی ایکٹ آ پ کو اس سے نہیں روکتا۔پولیس نے بہت سارے محکموں کے ساتھ ایم او یو سائن کیے ہیں۔ہر ایریا کو ہٹ کر رہے ہے۔۔۔ خواتین کو
آپریشن رول دے رہے ہیں۔ پولیس جینڈر بیلنس لانے میں وقت لگے گا۔تمام چیزوں پر ریفارم چل رہی ہیں۔
سول سوسائٹی کا شکریہ آ پ ھمیں مدد کرتی ہیں۔سوشل میڈیا کا شکریہ جو ایشوز کو ہائی لائٹ کرتا ہے۔