ملک ریاض نے بحریہ ٹائون متاثرین کے مسائل حل کرنے پر اتفاق کیا ہے،حافظ نعیم

667
امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن ادارہ نور حق میں متاثرین بحریہ ٹائون کے مشاورتی اجلاس سے خطاب اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کررہے ہیں

کراچی(اسٹاف رپورٹر)امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے کہا ہے کہ بحریہ ٹائون کے ہزاروں متاثرہ الاٹیز کے مسائل کے حل کے لیے ہر ممکن طریقہ ،بات چیت ، پر امن احتجاج اور عدالتی آپشن کو اختیار کیا جائے گا ، بحریہ ٹائون کی جانب سے مسائل کے حل کی یقینی دہانی کرائی گئی ہے ۔ جماعت اسلامی ،متاثرین بحریہ ٹائون اور انتظامیہ پر مشتمل 3،3 افراد کی کمیٹی قائم کر دی گئی ہے جو ایک ہفتے کے اندر طے شدہ امور پر عمل در آمد کو یقینی بنائے گی ۔ یہ کمیٹی بحریہ ٹائون کے سربراہ ملک ریاض کی ادارہ نور حق آمد اور تفصیلی ملاقات و تبادلہ خیال کی روشنی میں تشکیل دی گئی ہے ۔ فورسڈ پزیشن کا مسئلہ حل کر دیا گیا ہے ۔ 4 سال تک کسی کو فورسڈ پزیشن پر مجبور نہیں کیا جائے گا ۔ ملاقات میں اُصولی فیصلہ اوراتفاق رائے کیا گیا ہے کہ تمام مسائل حل کیے جائیں گے اور متاثرین کو ریلیف فراہم کیا جائے گا ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ادارہ نور حق میں بحریہ ٹائون کے سربراہ ملک ریاض سے ملاقات اور متاثرین کے مشاورتی اجلاس کے بعد میڈیا کے نمائندوں کو بریفنگ دیتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر جماعت اسلامی کراچی پبلک ایڈ کمیٹی کے صدر سیف الدین ایڈووکیٹ ،جنرل سیکرٹری نجیب ایوبی ، سیکرٹری اطلاعات زاہد عسکری اور متاثرہ الاٹیز بھی موجود تھے ۔ حافظ نعیم الرحمن نے کہا کہ اُمید ہے کہ بحریہ ٹائون کی جانب سے جو یقین دہانیاں کرائی گئی ہیں وہ پوری ہوں گی ۔ بحریہ ٹائون کا پروجیکٹ لاکھوں اسٹیک ہولڈرز کا پروجیکٹ ہے جو اندرون ملک و بیرون ملک مقیم ہیں ۔ ہم اس کے خلاف نہیں ، ہم اور متاثرین صرف یہ چاہتے ہیں کہ جن مسائل اور مشکلات کی نشاندہی کی گئی ہے انہیں دور کیا جائے ۔ مسائل حل کیے جائیں ۔ متاثرین نے جماعت اسلامی کے کردار ، امانت اور دیانت کی وجہ سے اعتماد کیا ہے اور یہ ہمارے پاس اپنے مسائل کے حل کے لیے آئے ہیں ۔ ہم ان کی ہر ممکن مدد کریںگے ۔ وزیر اعلیٰ ہائو س پر دیے جانے والے دھر نے کو فی الحال 20فروری تک مؤخر کردیا گیاہے ۔ کمیٹی کی میٹنگ اور عمل درآمد کی صورتحال کے جائزے اور مشاورت کے بعد آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے ۔ حافظ نعیم الرحمن نے کہا کہ ملک ریاض اور ان کی ٹیم کے ساتھ ہونے والی بات چیت کے بعد جو امور طے کیے گئے ہیں ان میں یہ بھی شامل ہے کہ جن الاٹیز کے بھی پلاٹس کینسل کیے گئے ہیں ان تمام لوگوں کو پلاٹس دیے جائیں گے یا اگر وہ چاہیں گے تو وہ اپنے پیسے واپس لے سکیں گے، پیسے واپسی کی مدت کا تعین کمیٹی کرے گی۔جو الاٹیز بھی ریفنڈ لیں گے کسی کا بھی چیک باؤنس نہیں ہوگا چیک آنر ہونے کی مدت کا تعین آئندہ 7 دن میں کردیا جائے گا۔بحریہ ہائٹس A,B,C,D,E, F,G,H,I,J,K,Lیہ تقریباً 12 ٹاورز ہیں ان تمام پروجیکٹس میں بحریہ رقم وصول کرچکا ہے ان کو آئندہ 6 ماہ سے ایک سال کی مدت میں مکمل کر کے الاٹیز کے حوالے کیاجائے۔جن الاٹیز کی بھی بکنگ بحریہ ٹاؤن کے کسی بھی پروجیکٹ میں ہے انہیں لازماً کہیں پر ایڈجسٹ کیاجائے گا یا پھر ان کی رقم واپس کردی جائے گی، وقت کا تعین کمیٹی کرے گی۔نئے پریسنٹ 61،62اور 63میں ساڑھے 14 ہزار الاٹیز کو ایڈجسٹ کردیا گیا ہے ان پلاٹس کی الاٹمنٹ 3 ماہ میں دے دی جائے گی، ان پریسنٹ کی جگہ کا تعین فوری طور پر لوگوںکو بتادیا جائے گا۔35فیصد ڈیولپمنٹ چارجز کے بارے میں مشترکہ کمیٹی غور کرے گی۔قبل ازیں بحریہ ٹائون کے رہائشی پروجیکٹ کے سربراہ ملک ریاض اپنی ٹیم کے ہمراہ ادارہ نور حق پہنچے جنہوں نے حافظ نعیم الرحمن اور دیگر رہنمائوں سے تفصیلی ملاقات اور مسائل کے حل کے لیے تبادلہ خیال کیا اور مسائل کے حل کی یقین دہانی کرائی ۔