اسپاٹ فکسنگ کیس؛ ناصر جمشید اور ساتھیوں کو سزا سنادی گئی

288

لندن: اسپاٹ فکسنگ کیس میں پاکستانی کرکٹر ناصر جمشید اور اُن کے ساتھیوں یوسف انور اور محمد اعجاز کو سزا سنادی گئی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق لندن کی نیشنل کرائم ایجنسی نے ناصر جمشید کو تحقیقات کے بعد اسپاٹ فکسنگ کیس میں گرفتار کیا تھا۔اسپاٹ فکسنگ میں ملوث گروپ نے بنگلا دیش پریمئیر لیگ 2016 اور پی ایس ایل2017 “طے” کرنے کی بھی  کوشش کی تھی۔

اوپننگ بیسٹمین کو رقم کے عوض اوور کی پہلی دو گیندوں پر رن نہ بنانے پر راضی کیا گیا تھا۔2016 میں ناصر جمشید نے خفیہ اہلکار کو بتایا کہ بنگلادیش پریمیئر لیگ (بی پی ایل) کے 6 کھلاڑی اس کیلئے کام کررہے ہیں۔

میڈیا رپورٹس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ مانچسٹر کراؤن کورٹ کو بتایا گیا ہے کہ فی میچ 30 ہزار پاؤنڈ کی رقم کھلاڑیوں میں تقسیم ہونا تھی۔ناصر جمشید نے شروع میں پی ایس ایل میں رشوت کی تردید کے بعد کورٹ میں اعتراف کیا تھا۔

واضح رہے کہ ناصر جمشید پرگزشتہ برس پی سی بی نے کرکٹ کھیلنے پر 10 برس کی پابندی عائد کی تھی۔