میرا ایمان ہے مودی کے 5اگست کے اقدام سے کشمیرآزاد ہوگا،وزیراعظم عمران خان

377
مظفر آباد: وزیراعظم پاکستان عمران خان آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی سے خطاب کررہے ہیں

مظفر آباد(خبر ایجنسیاں) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بھارت تباہی کی جانب گامزن ہے اور میرا ایمان ہے کہ اب کشمیر آزاد ہو کر رہے گا،مودی پھنس چکا ،پیچھے ہٹنے کا راستہ نہیں ،بھارتی حکمران بھی بوکھلاہٹ کا شکار ہیں ،بھارت تباہی کی جانب بڑھ رہا ہے، علیحدگی کی تحریکیں شروع ہو چکیں، بھارت میں مسلمان ہی نہیں دیگر اقلیتیں بھی غیر محفوظ ہو گئی ہیں ،کوئی نارمل انسان ایٹمی ملک کو 11دن میں فتح کرنے کا بیان نہیں دے سکتا،وعدہ کرتا ہوں ہر فورم پر مسئلہ کشمیر کو تیزی سے بڑھائیں گے، کشمیری مایوس نہ ہوں مشکل وقت گزر جائے گا۔ یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر عمران خان نے آزاد کشمیر کی قانون ساز اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جمہوریت سے ملک میں خوشحالی آتی ہے، دنیا کی تاریخ نے ثابت کیا ہے کہ جمہوریت سب سے بہتر نظام ہے اس لیے جتنی بہتر جمہوریت ہوگی اتنی خوشحالی ہوگی۔عمران خان نے کہا کہ اونچ نیچ اللہ کی طرف سے آتی ہے، قوموں پر مشکل وقت آتے ہیں، مشکل وقت میں قومیں صبر کرتی ہیں، مشکل وقت سے نکل کر ہم عظیم قوم بنیں گے۔عمران خان نے کہا کہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے جو قدم اٹھایا اس کے بعد مجھے یقین ہے کشمیر آزاد ہوگا کیونکہ 5 اگست کو مودی نے کشمیر کی حیثیت ختم کرکے بہت بڑی غلطی کی ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارت نے 80 لاکھ کشمیریوں کو نظربند کیا ہوا ہے، میں نے ہر فورم پر کشمیریوںکا مقدمہ لڑا اور انٹرنیشنل میڈیا کو انٹرویوز بھی دیے تاکہ بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب ہو۔ اقوام متحدہ، جنرل اسمبلی اور واشنگٹن میں امریکی صدر کے سامنے بھی مسئلہ کشمیر اٹھایا۔وزیراعظم نے کہا کہ یورپی پارلیمنٹ میں 600 اراکین نے کشمیر پر قرارداد پاس کی جبکہ بین الاقوامی میڈیا بھی اب کشمیر کو اہمیت دے رہا ہے۔عمران خان نے کہا کہ کشمیر کے ایشوز کو اگلے لیول پر لے جانے کے لیے منصوبہ بندی کررہے ہیں، دنیا کشمیر پر ہمارے نکتہ نظر کو اہمیت دے رہی ہے۔خطاب کے دوران عمران خان نے عندیہ دیا کہ بھارت کشمیر سے عالمی توجہ ہٹانے کے لیے فوجی آپریشن کرسکتا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ 5 اگست کے بعد ہمیں کشمیر کے معاملے پر آر ایس ایس کا فلسفہ بے نقاب کرنے کا موقع ملا ہے جس کے لیے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے علاوہ دیگر ممالک کے سربراہوں سے بات کی ہے۔بھارتی شہریت کے متنازع قانون پر عمران خان نے کہا کہ بھارت نے شہریت قانون سے اقلیتوں کو دیوار سے لگا دیا ہے وہاں مسلمانوں کو نہیں مسیحی اور ہندوؤں کو بھی خطرات لاحق ہیں۔انہوں نے کہا کہ بھارت میں علیحدگی پسند تحریکیں شروع ہوچکی ہیں، بھارت تباہی کی جانب بڑھ رہا ہے، مودی بھارت کو جہاں لے گیا اب پیچھے نہیں ہٹ سکتا۔مودی اور بھارتی آرمی چیف کے پاکستان کے خلاف بیانات پر عمران خان نے کہا کہ بھارت گھبراہٹ کا شکار ہے، پاکستان سے متعلق بیانات بھارتی قیادت کی بوکھلاہٹ کا عکاس ہیں۔عمران خان نے مزید کہا کہ مودی نے انتخابات میں پاکستان مخالف جذبات کو ابھارا اور آر ایس ایس کا فلسفہ دنیا کے سامنے رکھا۔مودی نے بدحواسی میں کہا میں 11 دن میں پاکستان فتح کرسکتا ہوں حالانکہ دونوں ممالک کے پاس ایٹمی ہتھیار ہیں اور ایسے میں کوئی نارمل انسان ایسی بات نہیں کرسکتا ، مودی صرف اپنی ہندو برادری کو خوش کرنے کے لیے ایسے بیانات دے رہا ہے جبکہ ان کے آرمی چیف نے بھی بیان دیا کہ پارلیمنٹ کے ایک اشارے پر ہم آزاد کشمیر فتح کرلیں گے، گھبرائے ہوئے لوگ ایسے بیانات دیتے ہیں اور وہ اس وقت گھبرائے ہوئے ہی ہیں کیوں کہ وہ پھنس چکے ہیں۔