نیب کی وجہ سے تجارتی سرگرمیاں نہیں رک سکتیں،چئیرمین جاوید اقبال

96
کراچی: چیئرمین نیب جسٹس(ر) جاوید اقبال پاکستان چیمبر آف کامرس کے ارکان سے خطاب کررہے ہیں
کراچی: چیئرمین نیب جسٹس(ر) جاوید اقبال پاکستان چیمبر آف کامرس کے ارکان سے خطاب کررہے ہیں

کراچی (آن لائن)چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ نیب کی وجہ سے تجارتی سرگرمیاں نہیں رک سکتیں۔نیب کا متبادل کوئی ادارہ نہیں ہے جو غریبوں کے درد کو سمجھے، ہر کسی کی عزت نفس کا خیال رکھنا نیب کا بنیادی مقصد ہے۔ نیب کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق کراچی میں ایف پی سی سی آئی کے ممبران سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا کہ نیب کا تعلق صرف اورصرف ریاست اور پاکستان سے ہے، بطور چیئرمین نیب جو کر رہا ہوں وہ صرف عوام کے لیے ہے۔ جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا کہ پہلے کرپشن دیمک تھی اب کینسر کی شکل اختیار کرچکی ہے، پاکستان آج
جس نہج پر ہے اس کی وجہ کرپشن ہے۔ سب سے پہلے خود احتسابی نیب سے شروع کی۔ انہوں نے کہا کہ یہ تاثر ہے کہ نیب کی وجہ سے تجارتی سرگرمیاں آگے نہیں بڑھ رہیں، 1235 ریفرنسز زیرسماعت ہیں جن میں سے 35 بھی بزنس کمیونٹی کے خلاف نہیں ہیں۔ چیئرمین نیب نے کہا کہ ایسی سوسائٹیز بھی ہیں جن کے پاس 500 گز زمین نہیں، ایسی سوسائٹیز نے 50 کروڑ روپے اکٹھے کیے اور بیرون ملک چلے گئے۔ جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا کہ زیادہ تر ریفرنسز ہاؤسنگ سوسائٹیز سے متعلق ہیں، کئی جعلی ہاؤسنگ سوسائٹیز نے بیوہ، پنشنرز کی جمع پونجی لوٹ لی، لوگوں کو چھت کے نام پر لوٹنا ڈکیتی کے مترادف ہے۔ چیئرمین نیب نے کہا کہ جن ہائوسنگ سوسائٹیز کے مالکان نے ڈکیتی کرکے جو پیسے لیے وہ واپس کردیں، ہاؤسنگ سوسائٹیز کا نیب سے کوئی جھگڑا نہیں ہے۔ جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا کہ نیب کا مقصد کسی کو پریشان یا ہراساں کرنا نہیں ہے، ایسی ہاؤسنگ سوسائٹیزجو عوام کا پیسہ لے کر ملک سے باہر گئے وہ واپس آئیں، یقین دلاتا ہوں ایسی ہاؤسنگ سوسائٹیز کو گرفتار نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ سختی ان سے کی جوملک سے بھاگے یا خود کو قانون سے بالا سمجھتے تھے، کسی کا خیال ہے کہ نیب میں حکومت کی مداخلت ہے تو یہ ذہن سے نکال دیں۔
چیئرمین نیب