بیوروکریسی کا رویہ پریشانی کا باعث ہے ‘عارف علوی

77
اسلام آباد: صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی قومی بین المذاہب امن کانفرنس سے خطاب کررہے ہیں
اسلام آباد: صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی قومی بین المذاہب امن کانفرنس سے خطاب کررہے ہیں

اسلام آباد(آن لائن)صدر مملکت ڈاکٹرعارف علوی نے دفتر کی فائلوں کو آگے بڑھانے میں بیوروکریسی کے رویے پر شکوہ کردیا۔انہوں نے کہا’ ’میں بیوروکریسی کے رویہ سے بہت پریشان ہوں‘‘۔ان خیالات کااظہار انہوں نے پاکستان انجینئرنگ کونسل (پی ای سی) کے تحت منعقدہ کانفرنس میں خطاب کرتے ہوئے کیا۔صدر مملکت نے کہا کہ ایک شخص نے پریزیڈنٹ ہاؤس میں فائل بھیجی لیکن 6 ماہ تک اسٹاف کو وہ فائل نہیں ملی اور جب ملی تو کہا گیا کہ اسٹیبلشمنٹ ڈویژن بھیجی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ فائلوں کو بے مقصد ایک سے دوسرے دفتر گھمانا ہماری قابلیت بن چکی ہے۔ عارف علوی نے زور دیا کہ ’دفتری امور بروقت ختم کرنے کی ضرورت ہے، فیصلے جلد لینے چاہییں۔واضح رہے کہ چند بیوروکریٹس نے وزیراعظم عمران خان سے شکایت کی تھی کہ انہیںنیب کی جانب سے ہراساں اور دھمکی آمیز رویے کا سامنا ہے جس کے باعث بیوروکریٹس دفتری فائلوں پر دستخط کرنے میں کتراتے ہیں۔بعدازاں بعض سینئر بیوروکریٹس کی شکایت پر حکومت نے نیب کو لگام دینے اور تاجربرادری اور بیوروکریسی کو سازگار ماحول فراہم کرنے کے لیے کوشش کردی۔تاہم حکومت نے گزشتہ ہفتے سینیٹ میں بل متعارف کرایا جو نیب کے اختیارات کو محدود کرنے سے متعلق تھا۔