خالصتان تحریک کے پیچھے پاکستان کا ہاتھ نہیں ہے، برطانوی کمیشن

104

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک) برطانوی کمیشن کی رپورٹ نے بھارت کا ایک اور جھوٹ بے نقاب کر دیا ہے۔ گزشتہ دنوں بھارتی پنجاب کی پولیس اور بھارتی حکومت ے دعویٰ کیا تھا کہ پاکستان ڈرونز کے ذریعے پنجاب میں ہتھیار گرا رہا ہے۔ بھارت کی جانب سے کہا گیا تھا کہ سرحد پار سے ڈورنز
کے ذریعے ہتھیار گرائے جا رہے ہیں اور یہ کام اسلام پسند عسکری گروپ اور خالصتان گروپ کے حامی لوگ پاکستان کی سرپرستی میں کر رہے ہیں۔اب برطانوی کمیشن نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ خالصتان تحریک کے پیچھے پاکستان کا ہاتھ نہیں ہے۔ رپورٹ کے مطابق سکھ بھارتی پالیسیوں سے خوش نہیں ہیں اور برطانیہ میں مقیم ہندوؤں اورسکھوں کے درمیان تناؤ ہے۔ کمیشن کے مطابق اوورسیزسکھ کمیونٹی شناخت کے حوالے سے زیادہ متحرک ہے۔کمیشن کی رپورٹ میں جائزہ لیاگیاکہ بیرون ملک مقیم سکھ خالصتان کیلیے زیادہ متحرک ہیں اور گولڈن ٹیمپل حملے کے بعدعلیحدہ وطن کے مطالبے میں اضافہ دیکھنے میں آیاہے۔کمیشن نے کہا کہ سکھوں کی اکثریت علیحدہ ملک کاقیام چاہتی ہے جبکہ بھارتی حکومت اورمیڈیاکارویہ سکھ علیحدگی پسندی کوہوا دے رہا ہے۔ پاکستان نے بھی اس حوالے سے کہا ہے کہ بھارت پاکستان پر حملے کے بہانے ڈھونڈ رہا ہے، اگر بھارت ایسی غلطی نہ کرے، اگر بھارت نے جارحانہ اقدام کرتے ہوئے کوئی غلطی کی تو پاکستان کی فورسز اسے بھرپور جواب دینے کیلیے تیار ہیں۔
برطانوی کمیشن