کپاس کی پیداوار میں کمی کے باعث امریکا سے دآمد میں اضافہ

62

کراچی(اسٹاف رپورٹر)کاٹن یو ایس اے کے ڈائریکٹر سپلائی چین جنوبی و جنوب مشرقی ایشیا ولیم بیٹن ڈروف نے کہا ہے کہ پاکستان میںکپاس کی پیداوار میںکمی کے باعث امریکا سے کپاس کی در آمدات میںاضافہ ہورہا ہے ،وہ ایف پی سی سی آئی میںکاٹن ڈے کے حوالے سے منعقدہ پروگرام سے خطاب کررہے تھے ،پروگرام کا اہتمام ٹیکس ٹاک انٹر نیشنل کی جانب سے ایف پی سی سی آئی ،کاٹن یو ایس اے ،ایس پی جی پرنٹرز کے اشتراک سے کیا گیا تھا۔اس موقع پر ایف پی سی سی آئی کے صدر انجینئر دارو خان،سینئر نائب صدر مرزا اختیار بیگ،یوسف فرید ،کاٹن کونسل انٹرنیشنل امریکا کے مظہر مرزااور دیگر ماہرین نے بھی خطاب کیا ۔ولیم بیٹن ڈروف کا مزید کہنا تھا کہ اس وقت پاکستان امریکی کپاس کا پانچواں بڑا خریدار ہے ،پاکستان دنیا میںکپاس کی پیداوار میںچوتھے جبکہ استعمال میںتیسرے نمبر پر ہے ،انہوںنے بتایا کہ پاکستان میں کپاس کی پیداوار میں کمی پر تشویش ہے اور پاکستان میںکپاس کے کاشتکاروںکو جدید رجحانات اپنانا ہوں گے ،انہوںنے بتایا کہ اس وقت پاکستان 10لاکھ کے قریب بیلز امریکا سے در آمد کررہا ہے جس میں مسلسل اضافے کا رجحان ہے ،انہوںنے مزید بتایا کہ کپاس کی بر آمد کے حوالے سے بھارت سے مسابقت ہے،تاہم بھارتی کاٹن ٹریڈرز کی جانب سے آخری وقت میںسودے منسوخ کیے جانے کے رجحان نے ان کی مارکیٹ کو متاثر کیا ہے ۔انجینئر دارو خان نے کہا کہ پاکستانی کپاس کے کاشتکاروں کو عالمی تناظر میںبدلتے ہوئے کاشتکاری کے طریقہ کار اپنانے ہوں گے ،مرزا اختیار بیگ کا کہنا تھا کہ ایف پی سی سی آئی کپا س کی پیداوار میں اضافے کے لیے اپنا کردار ادا کرے گی اور اس ضمن میںحکومت اور کپاس کے کاشتکاروں کے درمیان رابطے میںمعاونت فراہم کرے گی۔