اسلام آباد کا محاصرہ اور دھرنا دونوں ہوں گے، جے یو آئی

91

 

اسلام آباد(صباح نیوز) جمعیت علماء اسلام (ف) کے رہنما سینیٹر مولانا عطاء الرحمن کی طرف سے واضح کیا گیا ہے کہ حکومت گرانے کیلئے اسلام آباد کا محاصرہ(لاک ڈائون) اور دھرنا دونوں ہوں گے، وزیر امور کشمیر علی امین گنڈاپور کی حکومت پندرہ دنوں تک رہے گی تو مولانا فضل الرحمن کو نوٹس اور قانونی چارہ جوئی کرسکے گی۔ اسلام آباد کی طرف عوامی جم غفیر آئے گا اور کوئی اپوزیشن جماعت آزادی مارچ سے دور نہیں رہ سکے گی۔ ان خیالات کا اظہار
انہوں نے گزشتہ شام ایک ٹی وی پروگرام میں کیا ۔ جمعیت علماء اسلام (ف) کی طرف سے واضح کردیا گیا ہے کہ تحفظ ختم نبوتؐ اور استحکام پاکستان کیلیے اسلام آباد کالاک ڈائون اوردھرنا دونوں ہوں ، سینیٹر مولانا عطاالرحمن نے اس امر کی تصدیق کی اور کہاکہ عوامی سمندر اسلام آباد کی طرف بڑھے گا۔ آزادی مارچ اوردھرنے کے اخراجات کا ہمیں اندازہ ہے مگر اس کا تخمینہ وفاقی دارالحکومت کے حالات کے حوالے سے نہ لگایا جائے ہمارے کارکنان سوکھی روٹی دال کھا کر گزارا کرلیتے ہیں ۔ کارکنوں کو کہا گیا ہے کہ وہ نہ صرف آزادی مارچ میں شریک ہوں گے بلکہ اپنا خرچہ بھی خود اٹھائیں گے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے علی امین گنڈاپور کی حکومت پندرہ دنوں تک برقرار رہے گی تو مولانا کیخلاف قانونی چارہ جوئی کرسکے گی۔ کسی نوٹس کے بارے میں آگاہ نہیںہوں آج بھی چیلنج کرتا ہوں کہ ہزاروں ایکڑ تو دور کی بات ہے چار مرلے ہی ہماری سرکاری زمین ڈیرہ اسماعیل خان میں ثابت کردی جائے۔ سب اپوزیشن جماعتوں سے رابطے ہیں، آل پارٹیز کانفرنس میں سب کو اعتماد میں لیا گیا تھا مذہبی کارڈ کی بات نہیں ہے بلکہ اب تو عمران خان ہمارے آزادی مارچ سے اتنے خوفزدہ ہوگئے ہیں کہ انہوں نے مذہبی کارڈ کا استعمال شروع کردیا اور ایک مدرسے کے طالب علموں کو بھی انعامات دیے۔