مذہبی تہوار کی آڑ میں انتہاپسند یہودیوں کا مسجد اقصی پر حملہ

300

یہودی انتہا پسندوں نے مذہبی تہوار کے نام پرمقبوضہ بیت المقدس پر دھاوا بول دیا۔

منگل کے روز صیہونی انتہا پسندوں نے یہودی مذہبی تہوار “عيد الغفران” کی آڑ میں بیت المقدس کے قریب ریلی نکالی،اس دوران انتہا پسند یہودیوں نے اسرائیلی فوج کی سرپرستی میں مسجد الاقصی پر دھاوا بول دیا۔

اس موقع پر اسرائیلی فوج کی جانب سے فلسطینیوں کو مسجد الاقصی میں نماز ادا کرنے سے بھی روک دیا گیا۔

مسجد اقصی پر حملے کے وقت اسرائیلی حکومت کے انتہا پسند وزیر زراعت اوری آرئیل اور پارلیمنٹ کنیسٹ کے سخت گیر رکن یہودا گلیک بھی دوسو کے قریب حملہ آوروں کے ہمراہ موجود تھے.

دوسری جانب اسرائیلی فوج نے مقبوضہ مغربی کنارے کو سیکورٹی کے نام  پر بند کر دیا ہے ۔یہودیوں کے مذہبی تہوار عید الغفران کے موقع پر اسرائیلی فوج نے مغربی کنارےاور غزہ پٹی کے ساتھ گزرگاہ مکمل بند کردی ہے ۔