القاعدہ برصغیر کے سربراہ فضائی کارروائی میں مارے گئے، افغان انٹیلی جنس

53

افغان خفیہ ایجنسی این ڈی ایس نے القاعدہ برصغیر کے سربراہ عاصم عمر کی موت کا دعوی کیا ہے .

افغان خفیہ ایجنسی  کا کہنا ہے کہ القاعدہ جنوبی ایشیا کے سربراہ عاصم عمر کو امریکی و افغان سیکورٹی فورسز نے م23 ستمبر کے روز افغان صوبہ ہلمند  کے ضلع موسی کلا میں فضائی کارروائی کے دوران نشانہ بنایا ،

افغان خفیہ ادارے کے مطابق اس  مشترکہ آپریشن کے دوران 7 افراد مارے گئے جن میں 46 سالہ عاصم عمر اور ان کے  6 ساتھی بھی شامل تھے۔

افغان حکام کا کہنا ہے کہ عاصم عمر اپنے 6 ساتھیوں کے ساتھ ضلع موسیٰ کلا میں طالبان کے ایک کمپاؤنڈ میں موجود تھے۔،این ڈی ایس کا دعوی ہے کہ مرنے والوں میں  عاصم عمر اور القاعدہ سربراہ ایمن الظواہری کے درمیان رابطہ کار ریحان بھی شامل ہے .

القاعدہ سربراہ ایمن الظواہری نے ستمبر 2014 میں اپنے ویڈیو پیغام کے ذریعے القاعدہ برصغیر کے قیام کا اعلان کرتے ہوئے عاصم عمر کو نئی تنظیم کا سربراہ مقرر کیا تھا ۔