حکومت مزدور مسائل حل کرنے میں سنجیدہ نہیں

78

متحدہ لیبر فیڈریشن اور پاکستان مزدور محاز کا مشترکہ اجلاس لاہور میں منعقد ہوا۔اجلاس میں مختلف سرکاری اداروں کی نج کاری سمیت اداروں میں لیبر انسپکشن پر پابندی اور وزیر اعظم کے مشیر سید زلفی بخاری کے اعلان کے باوجود EOBI کے پینشرز کی پینشن میں اضافہ کا نہ ہونا جیسے مسائل پر گفتگو کرتے ہوئے مزدور رہنمائوں نے کہا کہ حکومت نے اپنے اقتدار کا ایک سال مکمل کر لیا ہے مگر ملک کے محنت کشوں کا کوئی مسئلہ حل نہیں ہوا ہے۔فیکٹریوں کی بندش کی وجہ سے لاتعداد مزدور بے روزگار ہو چکے ہیں اور ملک میں نئے کارخانے بھی قائم نہیں ہو رہے کہ مزدودوں کو روزگار مل سکے۔بڑھتی ہوئی مہنگائی نے مزدودوں کی زندگیاں اجیرن کر دی ہیں۔ مزدور رہنمائوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت مزدوروں کی تنخواہوں میں مہنگائی کی مناسبت سے اضافہ کرے اور فوری طور پر پنجاب حکومت کی طرف سے اداروں میں لیبر انسپکشن پر پابندی کے فیصلہ کو واپس لے کر لیبر انسپکشن کا پرانا طریقہ کار بحال کرے۔ اجلاس کے شرکا نے متحدہ لیبر فیڈریشن کی صوبہ پنجاب کی نئی باڈی کی بھی منظوری دی۔ اجلاس میں مزدور رہنمائوں محمد یعقوب، شوکت علی چودھری، محمد اکبر، حنیف رامے، الطاف بلوچ، نذیر شہزاد، محمد اکبر، محمد اکرم کے علاوہ دیگر نے بھی شرکت کی۔