ٹرمپ کی مہاجرین پر وحشیانہ ہتھکنڈے استعمال کرنے کی تجویز

54

واشنگٹن (انٹرنیشنل ڈیسک) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی مہاجرین مخالف پالیسی اور ان کا نفرت انگیز رویہ کھل کر سامنے آ گیا۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق ایک کتاب میں انکشاف ہوا ہے کہ صدر ٹرمپ نے سرحد پار کر کے امریکا آنے والے مہاجرین پر گولیاں برسانے، اُن پر سانپ چھوڑنے اور کرنٹ لگانے کا مشورہ دیا تھا۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز کے صحافیوں کی کتاب میں اس بات کا انکشاف کیا گیا ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ نے میکسیکو سے سرحد پار کرکے امریکا آنے والے مہاجرین کو روکنے کے لیے انتہائی سخت اقدامات کی تجاویز دے رکھی ہیں۔ رپورٹس کے مطابق صدر ٹرمپ نے سرحد پر کرنٹ والی عمارت، کیلوں والی دیوار، سانپ اور مگر مچھوں سے بھرے گڑھے کھودنے کی بھی تجاویز دیں۔ نیویارک ٹائمز کے 2 صحافیوں کی کتاب ’ بارڈر وارز‘ میں مزید انکشاف کیا گیا ہے کہ ٹرمپ نے اپنی انتظامیہ کو علاحدہ سے یہ تجویز دی کہ سیکورٹی اہل کار میکسیکو کی سرحد سے آنے والے مہاجرین کو روکنے کے لیے ان کی ٹانگوں پر گولیاں ماریں مگر انتظامیہ نے صدر کی اس تجویز کو غیر قانونی قرار دیا۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق وائٹ ہاؤس کی جانب سے اس رپورٹ پر کوئی رد عمل نہیں دیا گیا۔ واضح رہے کہ میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر امریکی ٹرمپ کی ترجیحات میں شامل ہے اور میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر کا آغاز ہوچکا ہے جس کے لیے امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون نے 3.6 ارب ڈالر کا بجٹ مختص کیا ہے۔ اس سے قبل بھی امریکی صدر نے اپنے ایک بیان میں سرحد پار کرنے والے مہاجرین کو گولی مارنے کا بیان دیا تھا۔