علی گڑھ میں مسلمان خاندان پر حملہ‘ خاتون بھی زخمی

196
علی گڑھ: مسلمان خاندان پر حملے کے خلاف معروف درس گاہ کے طلبہ احتجاجی مارچ کررہے ہیں
علی گڑھ: مسلمان خاندان پر حملے کے خلاف معروف درس گاہ کے طلبہ احتجاجی مارچ کررہے ہیں

لکھنؤ (انٹرنیشنل ڈیسک) بھارتی ریاست اتر پردیش کے شہر علی گڑھ میں نامعلوم افراد نے مسلمان خاندان پر حملہ کردیا۔ بھارتی اخبار دی ہندو کے مطابق اتوار کی سہ پہر علی گڑھ ریلوے اسٹیشن پر 10 سے 12 نامعلوم افراد کے ہجوم نے ایک مسلمان خاندان کے 4 افراد پر حملہ کردیا، جب کہ حملے کی وجہ ان کی مذہبی شناخت بتائی جارہی ہے۔ ایف آئی آر کے مطابق علی گڑھ کے قریب ایک گائوں کے رہایشی ساہم خان اپنے خاندان کے ساتھ کانپور آنند وہار ایکسپریس میں سفر کررہے تھے کہ شام ساڑھے 4 بجے وہ علی گڑھ موڑ پر ٹرین سے اترے تو اچانک ایک گروہ نے ان پر حملہ کردیا۔ جس کے نتیجے میں ساہم خان کے بھتیجے توفیق خان کے سر میں چوٹ لگی جب کہ ان کی اہلیہ کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔ متاثرہ افراد کو علاج کے لیے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے جواہر لال نہرو میڈیکل کالج میں داخل کروا دیا ہے۔ ساہم خان کے رشتے دار مقرم علی نے دی ہندو کو بتایا کہ توفیق پر نامعلوم افراد نے پتھروں سے حملہ کیا جس سے اس کے سر میں چوٹ آئی ہے جب کہ ساہم اور اس کی بیوی کو مکے مارے گئے، حملے کے دوران ساہم کی بیٹی پلیٹ فارم پر بے ہوش ہوگئی۔ مقرم علی نے مزید بتایا کہ ساہم کے خاندان پر حملہ کرنے والا 10 سے 12 افراد کا گروہ اس ٹرین میں سفر نہیں کررہا تھا بلکہ وہ کہیں باہر سے آیا تھا اور حملہ کر کے وہاں سے بھاگ گیا جب کہ متاثرہ خاندان پر حملہ کرنے کی وجہ یہ تھی کہ ان کی عورتیں برقعے میں موجود تھیں۔ ایس ایچ او یش پال سنگھ کا کہنا ہے کہ نامعلوم افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کرلی ہے اور سی سی ٹی وی فوٹیج کی مدد سے ملزمان کی تلاش شروع کردی ہے۔