مصباح کے دوعہدوں کیخلاف درخواست دائر،پی سی بی سے جواب طلب

139
لاہور: چیئرمین پی سی بی احسان مانی اور قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ وسلیکٹر مصباح الحق مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کررہے ہیں
لاہور: چیئرمین پی سی بی احسان مانی اور قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ وسلیکٹر مصباح الحق مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کررہے ہیں

لاہور (جسارت نیوز )لاہور ہائی کورٹ نے سابق کپتان مصباح الحق کو قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر کے عہدے دینے کے خلاف دائر درخواست سماعت کیلئے منظور کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ بورڈ(پی سی بی) سے جواب طلب کر لیا ہے۔تفصیلات کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ نے چند دن قبل سابق کپتان مصباح الحق کو قومی ٹیم کا ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر مقرر کیا تھا۔سابق کپتان کو دو عہدے دینے پر سابق کرکٹرز نے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر دونوں اہم عہدے ہیں اور ان دونوں عہدے سے انصاف کرنا مصباح الحق کے لیے انتہائی آسان ہو گا۔سابق کپتان کو اہم عہدے دینے کے خلاف لاہور ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی گئی تھی جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ مصباح الحق کے پاس ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر کے عہدے کا کوئی تجربہ نہیں اور ان کی تقرری غیرقانونی اور میرٹ کی خلاف ورزی ہے۔جمعہ کو دوران سماعت جسٹس امیر بھٹی نے کہا کہ مصباح الحق ہمارے ملک کے اسٹار ہیں اور آپ کو خوشی ہونی چاہیے کہ اس مرتبہ کوچ پی سی بی نے امپورٹ نہیں کیا۔جسٹس امیر بھٹی نے استفسار کیا کہ کیا مصباح جیسے کھلاڑی ہمارے کوچ نہیں ہونے چاہیں؟۔ آپ کا کیا خیال ہے کوچ انگلینڈ اور آسٹریلیا سے ہونا چاہیے؟ پی سی بی نے اچھا کام کیا تو تعریف کرنی چاہیے۔معزز عدالت کے جج نے سوال کیا کہ کیا آپ کو مصباح الحق کی قابلیت پر شک ہے؟ جس پر درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ مجھے مصباح الحق کی قابلیت پر کوئی شک نہیں لیکن ان کی تقرری کے لیے جو طریقہ کار اپنایا گیا وہ غلط ہے۔درخواست گزار نے کہا کہ مصباح الحق کی تقرری غیرقانونی اور میرٹ کی خلاف ورزی ہے کیونکہ انہیں ہیڈ کوچ کی نوکری کا کوئی تجربہ نہیں جبکہ مصباح الحق کو تنخواہ اور مراعات بھی قوانین سے زیادہ ہے۔درخواست گزار نے استدعا کی کہ عدالت مصباح الحق کی تقرری کالعدم قرار دے جس پر عدالت نے درخواست سماعت کے لیے منظور کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ بورڈ سے جواب طلب کر لیا۔