عمرکوٹ، پی پی رہنما کی گاڑی کی ٹکر سے ہلاک نوجوان کے ورثا کا احتجاج

306
عمرکوٹ : پی پی رہنما کی گاڑی کی ٹکر سے جاں بحق نوجوان کے قاتلوں کی عدم گرفتاری پر احتجاج کیا جارہا ہے
عمرکوٹ : پی پی رہنما کی گاڑی کی ٹکر سے جاں بحق نوجوان کے قاتلوں کی عدم گرفتاری پر احتجاج کیا جارہا ہے

 

عمرکوٹ (نمائندہ جسارت) عمرکوٹ میں سات روز قبل پیپلز پارٹی کے رہنما پونجومل کی گاڑی کی ٹکر سے ہلاک ہونے والے رجنیش مالھی کے قاتل گرفتار نہ کرنے کیخلاف عمرکوٹ میں مکمل شٹر ڈاؤن ہڑتال ضلع بھر میں احتجاج کاسلسلہ جاری رجنیش کے قاتل کی گرفتاری میں پولیس کی جانب سے عدم دلچسپی، عمرکوٹ پولیس سات روز بعد بھی رجنیش مالھی کے قتل میں ملوث پیپلز پارٹی کے رہنما اور سابق ایم پی اے پونجو مل کو گرفتار نہ کرسکی۔ پونجو مل کو گرفتار نہ کرنے پر عمرکوٹ میں اسٹوڈنٹ ایکشن کمیٹی کی اپیل پر مکمل شٹر ڈاؤن ہڑتال کی گئی، پریس کلب اللہ والاچوک پر مالھی برادری سمیت لوگوں کا شدید احتجاج، مظاہرہ اور دھرنا۔ رجنیش مالھی کے قاتل اور دیگر پانچ افراد کو شدید زخمی کرنے میں ملوث پونجو مل کو فوری گرفتار کیا جائے۔ پونجومل نے ٹارگٹ کرکے رجنیش کو قتل کیا، عمرکوٹ پولیس کیس میں بے حسی کا مظاہرہ کررہی ہے۔ دھرنے سے تحریک انصاف کے اقلیتی ایم این اے لال مالھی کا ٹیلیفون، مالھی برادری کے رہنما درمداس، اسٹوڈنٹ ایکشن کمیٹی اور دیگر مقررین کا خطاب۔ رجنیش مالھی کے قتل کے مقدمے میں ملوث پیپلز پارٹی کے رہنما اور سابق ایم پی اے پونجو مل ایڈووکیٹ کی عدم گرفتاری کیخلاف عمرکوٹ شہر میں مکمل شٹرڈاؤن ہڑتال کی گئی، تمام چھوٹی بڑی مارکیٹیں تھربازار، شاہی بازار، مدینہ مسجد مارکیٹ، عائشہ مارکیٹ، جمیل مارکیٹ سمیت تمام کاروباری مراکز مکمل طور پر بند رہے، پریس کلب عمرکوٹ اللہ والا چوک پر ایک بڑا احتجاجی مظاہرہ بھی کیا گیا اور کئی گھنٹے تک مظاہرین نے مین چوکوں پر دھرنے دے کر روڈ بلاک کردیے، جس کے باعث کراچی، حیدر آباد، میرپور خاص وغیرہ آنے جانے والی ہر قسم کی ٹریفک معطل ہوکر رہ گئی، جس کے باعث مسافروں اور عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا پریس کلب کیسامنے بہت بڑے احتجاجی مظاہرے سے اسلام آباد سے ٹیلیفون پر خطاب کرتے ہوئے تحریک انصاف کے اقلیتی ایم این اے لال مالھی نے کہا کہ رجنیش کو ٹارگٹ کرکے قتل کیا گیا ہے، اس قتل میں سندھ اسمبلی کی سرکاری گاڑی نمبر GSC-849 استعمال کی گئی۔ لال مالھی نے کہا کہ افسوس کا مقام ہے کہ رجنیش کے قتل کو سات روز ہوچکے ہیں مگر عمرکوٹ پولیس سابق ایم پی اے پونجو مل کو گرفتار نہیں کرسکی۔ عمرکوٹ کے عوام سراپا احتجاج ہیں مگر قاتل آزاد گھوم رہے ہیں، پولیس خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ سندھ حکومت اور اعلیٰ شخصیات رجنیش کے قتل پرافسوس کا اظہار کرنے کے لیے بھی تیار نہیں۔ عمرکوٹ پولیس نے سات روز قبل پیپلز پارٹی کے رہنما اور سابق ایم پی اے پونجومل ایڈووکیٹ کیخلاف مقدمہ درج کیا تھا مگر سات روز گزر جانے کے باوجود پونجومل کو گرفتار نہیں کرسکی ہے۔ رجنیش کے قتل پر عمرکوٹ، مٹھی، کراچی، حیدر آباد، نوابشاہ، سانگھڑ، ٹنڈوالہٰیار وغیرہ میں احتجاجی مظاہرے جاری ہیں۔ رجنیش مالھی کراچی کی اقرا یونیورسٹی میں شعبہ انجینئرنگ کا طالب علم تھا۔