سانحہ بلدیہ فیکٹری: المناک حادثے کو 7 برس بیت گئے

44

کراچی: سانحہ بلدیہ فیکٹری کو آگ کی لپیٹ میں آئے 7 برس بیت گئے،زندہ جل جانے والے250 افراد کے اہلخانہ آج بھی انصاف کے منتظر ہیں۔

 سانحہ بلدیہ فیکڑی کے المناک حادثے میں 250 افراد لقمہ اجل بن گئے کیس عدالتوں میں زیر سماعت ہے جبکہ ملزمان کو اب تک سزا نہیں مل سکی۔

متاثرین کے زخم اس وقت مزید گہرے ہوگئے تھے جب 2015 میں یہ معلوم ہوا کہ فیکڑی میں آگ لگی نہیں بلکہ لگائی گئی تھی۔ عدالت میں جمع کروائی جانے والی رینجرز رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ 20 کروڑ روپے بھتہ نہ دینے پر سیاسی جماعت ایم کیو ایم نے فیکڑی میں آگ لگوائی تھی۔

سال 2016 کے ستمبر میں اہم وقت اس وقت آیا جب بلدیہ فیکٹری سانحہ کا اہم ملزم عبدالرحمان عرف بھولا کو بنکاک کے ذریعے گرفتار کیا گیا، مقدمے میں پراسیکیوٹر ساجد محبوب شیخ کے مطابق اب تک 396 گواہوں کے بیانات قلمبند کئے جاچکے ہیں جبکہ مالکان سمیت 5 گواہوں کی باری آنا باقی ہے۔

مقدمے کے مرکزی ملزمان ایم کیو ایم لندن کے رحمان بھولا اور زبیر چریا گرفتار ہیں۔