کشمیر پر بیانات کے بجائے عملی اقدامات کی ضرورت ہے‘ فرید پراچہ

108

لاہور( نمائندہ جسارت)نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان ڈاکٹر فرید احمد پراچہ نے اپنے بیان میں کہاہے کہ سلامتی کونسل کے اجلاس کا محض انعقاد ایک اچھی پیش رفت ہونے کے باوجود صرف نشان راہ ہے ، منزل نہیں ہے ۔ انہوں نے کہاکہ مسئلہ کشمیر اور مظلوم کشمیریوں کو الفاظ ، تقاریر ، بیانات اور ڈائیلاگ کی نہیں ، عملی اقدامات کی ضرورت ہے ۔ انہوںنے کہاکہ کرفیو ابھی نافذ ہے ، غزہ کی طرح مقبوضہ کشمیر کو بھی ایک بڑے جیل خانے میں تبدیل کر دیا گیاہے، انسانی حقوق کی سنگین اور بدترین خلاف ورزیاں جاری ہیں ،بھارتی مبصرین کے بیانات کے مطابق گھروں میں گھس کر بیٹیوں کو اغوا کیا جارہاہے ، ادویات اور اشیائے خوردونوش ختم ہو چکی ہیں ۔فرید احمد پراچہ نے اقوا م متحدہ کے سیکرٹری جنرل سے سوال کیا کہ کیا وہ زندہ انسانوں کے لاشوں میں تبدیل ہونے کا انتظار کر رہے ہیں ۔ انہوں نے حکومت پاکستان پر زور دیا کہ مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اٹھانے کی متفقہ ، جامع ، ٹھوس اور تیز رفتار پالیسی بنائی جائے اور سلامتی کونسل کے مستقل و غیر مستقل ممبران سمیت ہر عالمی فورم پر موثر رابطوں کا انتظام کیا جائے ۔