سندھ میں ایڈز کے انسداد کے لیے جنوبی کوریا ایک لاکھ ڈالر دیگا

68

اسلام آباد (اے پی پی) جمہوریہ کوریا کی حکومت نے پاکستان کے صوبہ سندھ میں ایچ آئی وی وباء کی روک تھام کے عالمی ادارہ صحت کے پروگرام کیلیے ایک لاکھ ڈالر کی انسانی بنیادوں پر امداد دینے کا فیصلہ کیا ہے جس کے بعد کوریا عالمی ادارہ صحت کے پاکستان میں ایچ آئی وی وائرس کی روک تھام کے پروگرام میں تعاون کرنے والا پہلا ملک بن گیا ہے۔ ایچ آئی وی کی یہ وبا لاڑکانہ ضلع میں پھیلنے کا انکشاف ہوا تھا اور 13 جولائی 2019ء کو 935 افراد میں وائرس کی موجودگی کی تصدیق ہوئی تھی جن میں 15 سال سے کم عمر کے 760 بچے شامل ہیں جن کی شرح 82 فیصد بنتی ہے۔ پاکستان میں عالمی ادارہ کے نمائندے ڈاکٹر پلیتھا ماہی پالا نے اس سلسلے میں پروگرام کیلیے تعاون حاصل کرنے کیلیے اسلام آباد میں کوریا کے سفیر کواک سنگ کیو سے 10 جولائی کو ملاقات کی اور انہیں لاڑکانہ ضلع میں ایچ آئی وی کی وباء سے متعلق پروگرام سے آگاہ کیا تھا۔ ایچ آئی کی وباء کے تیزی سے پھیلنے اور بچوں کی اکثریت متاثر ہونے سے متعلق گہری تشویش اور ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے کورین سفارتخانے نے حکومت کو عالمی ادارہ صحت کے ایک عظیم مقصد میں شامل ہونے کیلیے آمادہ کرنے میں تعمیری کردار ادا کیا ہے۔ جنوبی کوریا کے عزم کے باوجود عالمی ادارہ صحت کے اس منصوبہ کیلئے فنڈنگ کی شدید قلت ہے جس کیلیے 2 برسوں میں ایچ آئی وی کے پھیلائو کی روک تھام اور تدارک کیلئے 4.5 ملین ڈالر کی خطیر رقم درکار ہو گی تاکہ ایچ آئی وی سے متاثرہ افراد بالخصوص بچوں میں وائرس کے پھیلائو میں کمی لائی جا سکے۔