پیپلز پارٹی نے سندھ میں کئی خاندانوں کو تباہ کردیا، حلیم عادل شیخ

69

سکھر (نمائندہ جسارت) پاکستان تحریک انصاف کے سندھ اسمبلی میں پارلیمانی لیڈر حلیم عادل شیخ نے کہا ہے پیپلز پارٹی میں بڑی بڑی مونچھیں رکھ کر بڑی بڑی باتیں کرنے والوں کا جلد احتساب ہوگا کیونکہ عمران خان کہہ چکے ہیں کہ ان کو مونچھوں سے پکڑ کر جیل میں ڈالیں گے،سکھر میں پی ٹی آئی رہنما مبین جتوئی کی رہائش گاہ پر پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی کا آخری وقت ہے اور اب یہ پارٹی تباہ ہونے جارہی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ این اے 205 میں ایسی کیا بات ہے کہ ساری پیپلزپارٹی وہاں پر لگی ہوئی ہے، وہاں کی سرکاری مشینری پیپلز پارٹی کی کمدار بنی ہوئی ہے اور بلاول زرداری 6 دن سکھر میں رہے، آخر ایسا کیا تھا کہ ان کو چھے دن رکنا پڑا، اس دوران ان کو سکھر کو فراہم کیے جانے والے گندے پانی کا خیال کیوں نہیں آیا۔ رتو ڈیرو میں 6 ماہ کی آصفہ نے دم توڑ دیا، وہاں نہیں گئے ۔سندھ کی بیٹیاں کراچی میں اپنے حق کے لیے دھکے کھا رہی ہیں لیکن اس کا خیال پیپلز پارٹی کو نہیں آیا، نرسز پر تشدد کیا گیا تو ہم برداشت نہیں کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی نے سندھ میں کئی خاندانوں کو تباہ کردیا ہے، ان میں جھگڑے کروائے۔ ان کا کہنا تھا کہ شاہد خاقان عباسی نے چوری کی تو پکڑے گئے نا، وہ سب پکڑے جائیں گے جنہوں نے چوری کی ہے، 24 ہزار ارب کی چوری ہوئی ہے کہاں گئی یہ رقم، سب پکڑے جائیں گے، اینٹ سے اینٹ بجانے والوں کی اپنی اینٹ سے اینٹ بج گئی ہے۔ سندھ میں گندم کے سالانہ دس ارب روپے کے اسکینڈل میں بھی بڑے بڑے نام ہیں۔ پیپلز پارٹی اداروں کو نشانہ بنارہی ہے۔ گھوٹکی الیکشن میں جتنا حرام کا پیسہ لگایا جارہا ہے ہم انہیں نہیں چھوڑیں گے۔ گھوٹکی کے الیکشن کے دوران ساری ضلعی انتظامیہ استعمال کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ این اے 205 پر پی ٹی آئی کے امیدوار افتخار احمد لوند کیخلاف گھوٹکی میں ڈرائیور پر تشدد کا واقعہ ڈرامہ اور بے بنیاد ہے۔