کراچی: سی این جی کی قیمت میں اضافے کے خلاف ٹرانسپورٹرز کی ہڑتال

139

 

کراچی (نمائندہ جسارت) کراچی میں سی این جی کی قیمت میں اضافے کے خلاف منگل کو کراچی ٹرانسپورٹ اتحاد کی جانب سے ہڑتال کی گئی،جس کے باعث سڑکوں پر پبلک ٹرانسپورٹ معمول سے کم رہی۔ تفصیلات کے مطابق کراچی سمیت سندھ بھر میں سی این جی کی قیمت 19 روپے اضافے کے ساتھ 123 روپے فی کلو ہوگئی ہے جس کے باعث شہر کے مختلف سی این جی اسٹیشنز بند ہیں اور ڈرائیورز سراپا احتجاج ہیں۔ کراچی ٹرانسپورٹ اتحاد کی جانب سے سی این جی مہنگی کرنے کے خلاف ہڑتال کی گئی۔ ہڑتال کے باعث کچھ روٹس پر بسیں معمول سے کم نظرآئیں، سڑکوں پر منی بسیں بھی کم ہیں جس کی وجہ سے مسافروں کو دفاتر اور بچوں کو اسکول جانے میں دشواری کا سامنا کرناپڑاہے۔مسافروں کے مطابق کرایوں میں اضافے کرنے کے لیے دبائو
ڈالنے کے لیے بیشتر بسیں سڑکوں سے غائب ہیں، بسوں کی کمی کے سبب خواتین سمیت دفاتر جانے والے شہریوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔ ڈرائیورزکے مطابق جوگاڑیاں ڈرائیورز کے زیر نگرانی ہیں وہ کم تعداد میں سڑکوں پر نکلی ہیں اور تقریباً 30فیصد بسیں کم نکالی گئی ہیں۔ کراچی ٹرانسپورٹ اتحاد کے صدر ارشاد بخاری کے مطابق سی این جی کی قیمت میں ہوشربا اضافے کے بعد بسیں چلانا ممکن نہیں، کرایوں میں اضافے کی بات بعد میں طے کریں گے۔ انہوں نے کہاکہ سی این جی پمپ مالکان من مانی کرتے ہوئے پہلے ہی آہستہ آہستہ قیمتیں بڑھاتے رہے ہیں۔ دوسری جانب آن لائن ٹیکسی سروس نے بھی اپنے کرایوں میں 5 فیصد اضافے کا اعلان کیا ہے جس کے متعلق ڈرائیورز کو نوٹس جاری کر دیے گئے ہیں۔ ڈیلرز کے مطابق بیشتر اسٹیشنز پر سی این جی 123 روپے فی کلو تک فروخت کی جارہی ہے۔ اعداد و شمار کے مطابق سی این جی قیمت میں گزشتہ سال اکتوبر سے اب تک 41 روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔
ٹرانسپورٹر ہڑتال